زندگی سے بہت ہی بدظن ہیں

زندگی سے بہت ہی بدظن ہیں
زندگی سے بہت ہی بدظن ہیں

  

زندگی سے بہت ہی بدظن ہیں

کاش! اک بار مر گئے ہوتے

مرہمِ یاس یاد ہی نہ رہی

اب تلک زخم بھر گئے ہوتے

اجتہادِ جنوں سے کیا پایا

سب جدھر تھے، ادھر گئے ہوتے

غیر کے دل میں گر اترنا تھا

میرے دل سے اتر گئے ہوتے

پاۓ کوہانِ فرشِ لالہ و گل

بر دمِ نیشتر گئے ہوتے

وقت پر رازداں نے زہر دیا

چارہ گر، کام کر گئے ہوتے

میرے وحشت کدے میں کیوں آۓ

بلخ و کاشغر گئے ہوتے

بار بار اس نے دی تھیں آوازیں

سوچتے میں بسر گئی ہو گی

نہ ملا ہم کو وقتِ شانہ کشی

کتنے گیسو سنور گئے ہوتے

شاعر: جون ایلیا

Zindagi Say Bahut Hi Badzan Hen

Kaash Ik Baar Mar Gaey Hotay

Marham  e  Yaas Yaad Hi Na Raha

Ab Talak Zakhm Bhar Gaey Hotay

Ijtehaad  e  Junoon Say Kia Paaya

Sab Jidhar Thay, Udhar Gaey Hotay

Ghair K Dil Men Gar Utarna Tha

Meray Dil Say Utar Gaey Hotay

Paaey Kohaan  e  Farsh  e  Laal  o  Gul

Bar Dam  e  Neeshtar Gaey Hotay

Waqt Par Raazdaan Nay Zehr Dia

Chaaragar Kaam Kar Gaey Hotay

Meray Wehshat kada Men Kiun Aaey

Balkh  o  Kaashghar Gaey Hotay

Baar Baar Uss Nay Di Then Awaazen

Sochnay Men Parr Gaey Hotay

Na Mila Ham Ko Waqt  e  Shaana Kashi

Kitnay Gaisu Sanwar Gaey Hotay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -غمگین شاعری -