ہم ترا ہجر منانے کے لیے نکلے ہیں

ہم ترا ہجر منانے کے لیے نکلے ہیں
ہم ترا ہجر منانے کے لیے نکلے ہیں

  

ہم ترا ہجر منانے کے لیے نکلے ہیں

شہر میں آگ لگانے کے لیے نکلے ہیں

شہر کوچوں میں کرو حشر بپا آج کہ ہم

اس کے وعدوں کو بھلانے کے لیے نکلے ہیں

ہم سے جو روٹھ گیا ہے وہ بہت ہے معصوم

ہم تو اوروں کو منانے کے لیے نکلے ہیں

شہر میں شورہے، وہ یُوں کہ گماں کے سفری

اپنے ہی آپ میں آنے کے لیے نکلے ہیں

وہ جو تھے شہر تحیّر ترے پُر فن معمار

وہی پُر فن تجھے ڈھانے کے لیے نکلے ہیں

رہگزر میں تری قالین بچھانے والے

خون کا فرش بچھانے کے لیے نکلے ہیں

ہمیں کرنا ہے خداوند کی امداد سو ہم

دیر و کعبہ کو لڑانے کے لیے نکلے ہیں

سرِ شب اک نئی تمثیل بپا ہونی ہے

اور ہم پردہ اٹھانے کے لیے نکلے ہیں

ہمیں سیراب نئی نسل کو کرنا ہے سو ہم

خون میں اپنے نہانے کے لیے نکلے ہیں

ہم کہیں کے بھی نہیں پر یہ ہے رُوداد اپنی

ہم کہیں سے بھی نہ جانے کے لیے نکلے ہیں

شاعر: جون ایلیا

Ham Tira Hijr Mnaanay K Liay Niklay Hen

Shehr Men Aag Lagaanay K Liay Niklay Hen

Shehr Koochon Men Karo Hashr Bapaa Aaj Keh Ham

Uss K waadon Ko Bhulaanay K Liay Niklay Hen

Ham Say Jo Rooth Gia Hay Wo Bahut Hay Masoom

Ham To Aoron Ko Manaanay K Liay Niklay Hen

Shehr Men Shor Hay Wo yun Keh Gumaan K Safri

Apnay Hi Aap Men Aanay K Liay Niklay Hen

Wo Jo Thay Shehr  e tahayyur Tiray Pur Fan Memaar

Wahi Pur Fan Tujhay Dhaanay K Liay Niklay Hen

Rehguzar Men Tiri Qaleen Bichaanay Walay

Khoon Ka Farsh Bichaanay K Liay Niklay Hen

Hamen Karna Hay Khudawand ki Imdaad So Ham

Dair  o Kaaba Ko Larraanay K Liay Niklay Hen

Sar  e  Shab Ik Nai Tamseel Bapa Hoti Hay

Aor Ham parda Uthaany K Liay Niklay Hen

Hamen Sairaab nai Nasl Ko Karna Hay So Ham

Khoon Men Apnay Nahaanay K Liay Niklay Hen

Ham Kahen K Bhi Nahen Par Yeh Hay Rudaad Apni

Ham Kahen Say Bhi Na Jaanay K Liay Niklay Hen

Poet:Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -