کب اس کا وصال چاہیے تھا |جون ایلیا |

کب اس کا وصال چاہیے تھا |جون ایلیا |
کب اس کا وصال چاہیے تھا |جون ایلیا |

  

کب اس کا وصال چاہیے تھا

بس ایک خیال چاہیے تھا

کب دل کو جواب سے غرض تھی

ہونٹوں کو سوال چاہیے تھا

شوق ایک نفس تھا اور وفا کو

پاسِ مہ و سال چاہیے تھا

اک چہرۂ سادہ تھا جو ہم کو

بے مثل و مثال چاہیئے تھا

ایک کرب میں ذات و زندگی ہیں

ممکن کو مُحال چاہیے تھا

میں کیا ہوں بس اک ملالِ ماضی

اُس شخص کو حال چاہیے تھا

ہم تم جو بچھڑ گئے ہیں ہم کو

کچھ دن تو ملال چاہیے تھا

وہ جسم ' جمال تھا سراپا

اور مجھ کو جمال  چاہیے تھا

وہ شوخِ  رمیدہ مجھ کو اپنی

بانہوں میں نڈھال چاہیے تھا

تھا وہ جو کمال، شوقِ وصلت

خواہش کو زوال چاہیے تھا

جو لمحہ بہ لمحہ مل رہا ہے

وہ سال بہ سال چاہیے تھا

شاعر: جون ایلیا

Kab Uss KaWisaal Chaahiay Tha

Bass Aik Khayaal Chaahiay Tha

Kab Dil Ko Jawaab Say Gharaz Thi

Honton Ko Sawaal Chaahiay Tha

Shoq Aik Nafas Tha Aor Wafa Ko

Paas  e  mah  o  Saal Chaahiay Tha

Aik Cheha  e  Saada Tha Ham Ko

Be Misl  o  Misaaal Chaahiay Tha

Ik Karb Men Zaat  o Zindagi Hen

Mumkin Ko Muhaal Chaahiay Tha

Main Kia Hun Bass Ik Malaal  e  Maazi

Uss Shakhs Ko Haal Chaahiay Tha

Ham Tum Jo Bicharr Gaey Hen Ham Ko

Kuch Din To Malaal Chahiay Tha

Wo Jism,  Jamaal Tha Saraapa

Aor Mujh Ko Jamaal Chaahiay Tha

Wo Shokh  e  Rameeda  Mujh Ko Apni

Baanhon Men Nidhaal Chaahiay Tha

Tha Wo Jo Kamaal , Shoq  e  Waslat

Khaahish Ko Zawaal Chaahiay Tha

Jo Lamha Ba LamhaMill Raha Hay

Wo Saal Ba Saal Chaahiay Tha

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -