اُس نے ہم کو گمان میں رکھا

اُس نے ہم کو گمان میں رکھا
اُس نے ہم کو گمان میں رکھا

  

اُس نے ہم کو گمان میں رکھا

اور پھر کم ہی دھیان میں رکھا

کیا قیامت نمو تھی وہ جس نے

حشر اُس کی اٹھان میں رکھا

جوششِ خوں نے اپنے فن کا حساب

ایک چوپ، ایک چٹان میں رکھا

لمحے لمحے کی اپنی تھی اک شان

تو نے ہی ایک شان میں رکھا

ہم نے پیہم قبول و  رد کر کے

اُس کو اِک امتحان میں رکھا

تم تو اُس یاد کی امان میں ہو

اُس کو کس کی امان میں رکھا

اپنا رشتہ زمیں سے ہی رکھو

کچھ نہیں آسمان میں رکھا

شاعر: جون ایلیا

 Uss Nay Ham Ko Gumaan Men Rakha

Aor PhirKam Hi Dhayaan Men Ralkha

Kia Qayaamat Namu Thi Wo Jiss Nay

Hashr Uss ki Uthaan Men Rakha

Joshash  e  Khoon Nay Apnay Fan Ka Hisaab

Aik Chob, Ik Chtaan Men Rakha

Lamhay Lamhay Ki Thi Apni Ik Shaan

Tu Nay Hi Aik Shaan Men Rakha

Ham Nay Paiham Qabool  o  Rad Kar K 

Uss Ko Ik Imtehaam Men Rakha

Tu To Uss Yaad Ki Amaan Men Ho

Uss Ko Kiss Ki Amaaan Men Rakha

Apna Rishta Zameen Say Hi Rakho

Kuch Nahen Aasmaan Men Rakha

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -