اپنی منزل کا راستہ بھیجو

اپنی منزل کا راستہ بھیجو
اپنی منزل کا راستہ بھیجو

  

اپنی منزل کا راستہ بھیجو

جان ہم کو وہاں بلا بھیجو

کیا ہمارا نہیں رہا ساون

زلف یاں بھی کوئی گھٹا بھیجو

نئی کلیاں جو اب کھلی ہیں وہاں

ان کی خوشبو کو اک ذرا بھیجو

ہم نہ جیتے ہیں اور نہ مرتے ہیں

درد بھیجو نہ تم دوا بھیجو

دھول اڑتی ہے جو اس آنگن میں

اس کو بھیجو ، صبا صبا بھیجو

اے فقیرو! گلی کے اس گل کی

تم ہمیں اپنی خاکِ پا بھیجو

شفقِ شام ہجر کے ہاتھوں

اپنی اتری ہوئی قبا بھیجو

کچھ تو رشتہ ہے تم سے کم بختو

کچھ نہیں، کوئی بد دعا بھیجو

شاعر: جون ایلیا​

Apni Manzil Ka Raastaa Bhejo

Jaan Ham Ko Wahaan Bulaa  Bhejo

Kia Hamaara Nahen Raha Saawan

Zulf Yaan Bhi Koi Ghataa  Bhejo

Nai Kalyaan Jo Ab Khili Hen Wahaan

Un Ki Khushbu Ko Ik Zaraa  Bhejo

Ham Na Jeetay Hen Aor Na  Martay Hen

Dard Bhejo Na Tum Dawaa  Bhejo

Dhool Urrti Hay Jo Uss Aangan Men

Uss Ko Bhejo, Sabaa Sabaa  Bhejo

Ay Faqeero, Gali K Uss Gull Ki

Tum Hamen Apni Khaak  e  Paa  Bhejo

Shafaq  e  Shaam  e  Hijr K Haathon

Apni Utri Hui Qabaa  Bhejo

Kuch To Rishta Hay Tum Say Kam Bakhto

Kuch Nahen, Koi Bad Duaa  Bhejo

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -