خود سے رشتے رہے کہاں اُن کے

خود سے رشتے رہے کہاں اُن کے
خود سے رشتے رہے کہاں اُن کے

  

خود سے رشتے رہے کہاں اُن کے

غم تو جاتے تھے رائیگاں اُن کے

مست ان کو گماں میں رہنے دے

خانۂ برباد ہیں گماں اُن کے

یار سکھ نیند ہو نصیب اُن کو

دُکھ یہ ہے دکھ ہیں بےاماں  اُن کے

کتنی سر سبز تھی زمیں اُن کی

کتنے نیلے ہیں آسماں اُن کے

نوحہ خوانی ہے کای ضرور انہیں

اُن کے نغمے ہیں نوحہ خوان اُن کے

شاعر: جون ایلیا

Khud Say Rishtay Kahaan Un K

Gham To Jaanay Thay Raaogaan Un K

Mst Un Ko Gumaan Men Rehnay Day

Khaana  e  Barbaad Hen Gumaan Un K

Yaar Sukh Neend Ho Naseeb Un Ko

Dukh Yeh Hay, Dukh Hen Be Amaaan Un K

Kitni Sarsabz Thi Zameen Un  Ki

Kitnay Neelay Hen Asmaan Un K

Nohaa Khaani Hay Kia Zaroor Unhen

Un K Naghmay Hen Noha Khaan Un K

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -