زخمِ امید بھر گیا کب کا

زخمِ امید بھر گیا کب کا
زخمِ امید بھر گیا کب کا

  

زخمِ امید بھر گیا کب کا

قیس تو اپنے گھر گیا کب کا

آپ اک اور نیند لے لیجے

قافلہ کوچ کر گیا کب کا

اب  تو  منہ  اپنا مت دکھاؤ مجھے

ناصحو ، میں سُدھر گیا کب کا

آپ اب پوچھنے کو آئے ہیں؟

دل مری جان، مر گیا کب کا

میرا فہرست سے نکال دو نام

میں تو  خود سے مکر  گیا کب کا

شاعر: جون ایلیا

Zakhm  e  Umeed Bhar Gia Kab Ka

Qais To Apnay Ghar Gia Kab Ka

Aap Ik Aor Neend Lay Liay

Qaafla Kooch kar Gia Kab Ka

Ab To Munh apna Amat Dikhaao Mujhay

Naasaho , Main Sudhar Gia Kab Ka

Aap Ab Poochnay Ko Aaey Hen

Dil Miri Jaan Mar Gia Kab Ka

Mera Fehrist Say Nikaal Do Naam

Main To Khud Say Mukar Gia Kab Ka

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -