تشنگی نے سراب ہی لکھا

تشنگی نے سراب ہی لکھا
تشنگی نے سراب ہی لکھا

  

تشنگی نے سراب ہی لکھا

خواب دیکھا تھا، خواب ہی لکھا

ہم نے لکھا نصابِ تِیرہ شبی

اور بصد آب و تاب ہی لکھا

منشیانِ شُہود نے تا حال

ذکرِ غیب و حِجاب ہی لکھا

نہ رکھا ہم نے بیش و کم کا خیال

شوق کو بے حساب ہی لکھا

نہ لکھا اس نے کوئی بھی مکتُوب

پھر بھی ہم نے جواب ہی لکھا

دوستو ہم نے اپنا حال اُسے

جب بھی لکھا، خراب ہی لکھا

ہم نے اُس شہر دین و دولت میں

مسخروں کو جناب ہی لکھا

شاعر: جون ایلیا

Tshgai Nay Saraab Hi Likha

Khaab Dekha Tha Khaab Hi Likha

ham Nay Likha Nisaab  e  Teera Shabi

Aor Ba Sab Aab  o  Taab Hi Likha

Mushiaan  e  Shahood Nay Ta Haal

Zikr  e  Ghaib  o  Hijaab Hi Likha

Na Rakha Ham Besh  o  Kam ka Khayaal

Shaoq Ko Be Hisaab Hi Likha

Dosto, Ham Nay Apna Haal Usay

Jab Bhi Likha Kharaab Hi Likha

Na Likha Uss Nay Koi Bhi Maktoob

Phir bhi Ham Jawaab  Hi Likha

Ham Nay Iss Shehr  e  Deen  o  Dolat Men

Maskharon Ko Janaab Likha

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -