تم سے بھی اب تو جا چُکا ہوں میں

تم سے بھی اب تو جا چُکا ہوں میں
تم سے بھی اب تو جا چُکا ہوں میں

  

تم سے بھی اب تو جا چُکا ہوں میں

دُور ہا دُور آ چُکا ہوں میں

یہ بہت غم کی بات ہو شاید

اب تو غم بھی گنوا چُکا ہوں میں

اس گمانِ گماں کے عالم میں

آخرش کیا بُھلا چُکا ہوں میں

اب ببر شیر اشتہا ہے میری

شاعروں کو تو کھا چُکا ہوں میں

میں ہوں معمار پر یہ بتلا دوں

شہر کے شہر ڈھا چُکا ہوں میں

حال ہے اک عجب فراغت کا

اپنا ہر غم منا چُکا ہوں میں

لوگ کہتے ہیں میں نے جوگ لیا

اور دھونی رَما چُکا ہوں میں

نہیں اِملا دُرست غالب کا

شیفتہ کو بتا چُکا ہوں میں

شاعر: جون ایلیا

Tum Say Bhi Ab To Ja Chuka Hun Main

Door Ha Door Aaa Chuka Hun Main

Ye Bahut Gham Ki Baat Ho Shaayad

Ab To Gham Bhi Ganwaa Chuka Hun Main

Iss Gumaan  e  Gumaan K Aalam Men

Aakhrish Kia Bhula Chuka Hun Main

Ab Babar Sher Ishtihaa Hay Meri

Shaairon Ko To Khaa Chuka Hun Main

Main Hun Memaar par Yeh Batla Dun

Shehr K Shehr Dhaa Chuka Hun Main

Haal hay Ik Ajab Faraghat Ka

Apna Har Gham Manaa Chuka Hun Main

Log Kehtay Hen Main Nay Jog Lia

Aor Dhooni Ramaa Chuka Hun Main

Nahen Imlaa Darust GHALIB Ki

SHAIFTA Ko Bataa Chuka Hun Main

Poet : Jaun ELia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -