اے کوئے یار تیرے زمانے گزر گئے

اے کوئے یار تیرے زمانے گزر گئے
اے کوئے یار تیرے زمانے گزر گئے

  

اے کوئے یار تیرے زمانے گزر گئے

جو اپنے گھر سے آئے تھے وہ اپنے گھر گئے

اب کون زخم و  زہر سے رکھے گا سلسلے

جینے کی اب ہوس ہے ہمیں ہم تو  مر  گئے

اب کیا کہوں کہ سارا محلہ ہے شرم سار

میں ہوں عذاب میں کہ میرے زخم بھر گئے

ہم نے بھی زندگی کو تماشا بنا دیا

اس سے گزر گئے کبھی خود سے گزر گئے

تھا  رَن  بھی زندگی کا عجب طرفہ ماجرا

یعنی اُٹھے تو پاؤں مگر جونؔ سر  گئے

شاعر: جون ایلیا

Ay Koo  e  Yaar Teray Zamaanay Guzar Gaey

Jo Apnay Ghar Say Aaey Thay Wo Apnay Ghar Gaey

Ab Kon Zakhm  o  Zehr Say Rakhay Ga Silsala

Jeenay Ki Ab Hawas Hay hamen, Ham To Mar Gaey

Abb Kia kahun Keh Saara Muhalla Hay Sharmsaar

main Hun Azaab Men Keh Miray Zakhm Bhar Gaey

Ham Nay Bhi Zindagui Ko Tamaasha Bana Dia

Uss SayGuzar Gaey  kbhi  Khud Say Guzar Gaey

Tha Rann Bhi Zindagi Ka Ajab Tufa Maajra

Yaani Uthay To Paaon Magar JAUN Sar GAey

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -