کسی سے کوئی خفا بھی نہیں رہا اب تو

کسی سے کوئی خفا بھی نہیں رہا اب تو
کسی سے کوئی خفا بھی نہیں رہا اب تو

  

کسی سے کوئی خفا بھی نہیں رہا اب تو

گلہ کرو  کہ گلہ بھی نہیں رہا  اب تو

چنے ہوئے ہیں لبوں پرترے ہزار جواب

شکایتوں کا مزا بھی نہیں رہا اب تو

مرے وجود کا اب کیا سوال ہے یعنی

میں اپنے حق میں برا بھی نہیں رہا اب تو

یہی عطیۂ صبحِ  شبِ وصال ہے کیا

کہ سحرِ ناز  و ادا بھی نہیں رہا اب تو

یقین کر جو تری آرزو میں تھا پہلے

وہ لطف تیرے سوا بھی نہیں رہا اب تو

وہ سکھ وہاں کے خدا کی ہیں بخشیشیں کیا  کیا

یہاں یہ دکھ کہ خدا بھی نہیں رہا اب تو

شاعر: جون ایلیا

Kisi Say Koi Khafaa Bhi Nahen Raha Ab To

Gila Karo Keh Gila Bhi Nahen Raha Ab To

Chunay Huay Hen Labon Par Tiray hazaar Jawaab

Shikaaiaton Ka Maza Bhi Nahen Raha Ab To

Miray Wajood Ka Ab Kia Sawaal hay yaani

Main Apnay Haq  Men Bura Bhi Nahen Raha Ab To

Yahi Atya  e  Subh  e  Shab  e  Vissal hay Kia

Keh Sehr  e  Naaz  o  Ada Bhi Nahen Raha Ab To

Yaqeen Kar Jo Tiri Aarzu Men Tha Pehlay 

Wo Lutf Teray Siwaa  Bhi Nahen Raha Ab To

Wo Sukh Wahaan K Khud aKi Hen bakhshishen kia Kia

Yahaan Yeh Dukh Keh Khuda Bhi Nahen Raha Ab To

Poet: jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -