ذِکر بھی اُس سے کیا بَھلا میرا

ذِکر بھی اُس سے کیا بَھلا میرا
ذِکر بھی اُس سے کیا بَھلا میرا

  

ذِکر بھی اُس سے کیا بَھلا میرا

اُس سے رشتہ ہی کیا رہا میرا

آج مجھ کو بہت بُرا کہہ کر

آپ نے نام تو لیا میرا

آخری بات تم سے کہنا ہے

یاد رکھنا نہ تم کہا میرا

اب تو کچھ بھی نہیں ہوں میں ویسے

کبھی وہ بھی تھا مبتلا میرا

وہ بھی منزل تلک پہنچ جاتا

اُس نے ڈھونڈا نہیں پتا میرا

تُجھ سے مُجھ کو نجات مِل جائے

تُو دُعا کر کہ ہو بَھلا میرا

کیا بتاؤں بِچھڑ گیا یاراں

ایک بلقیس سے سَبا میرا

شاعر: جون ایلیا

Zikr Uss Say Bhi Kia Bhalaa Mera

Uss Say Rishta Hi Kia Rahaa Mera

Aaaj Mujh Ko nahut Bura Keh Kar

Aap Nay Naam To Liaa Mera

Aakhri Baat Tum Say Kehna Hay

Yaad Rakhna Na Tum Kahaa Mera

B To Kuch Bhi Nahen Hun MAin Wesay

Kabhi Wo Bhi Tha Mubtalaa Mera

Wo Bhi Manzill Talak pahunch Jaata

Uss nay Dhoonda nahen pataa Mera

Tujh Say Mujh  ko Nijaat Mil jaaey

Tu Dua Kar Keh Ho Bhla Mera

Kai Bataaun Bicharr Gia Yaaran

Aik Bilqwws Say Sabaa Mera

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -