لاک ڈاﺅن کے دوران آپ کا وزن کیوں بڑھ گیا؟ سائنسدانوں نے اصل وجہ بتادی

لاک ڈاﺅن کے دوران آپ کا وزن کیوں بڑھ گیا؟ سائنسدانوں نے اصل وجہ بتادی
لاک ڈاﺅن کے دوران آپ کا وزن کیوں بڑھ گیا؟ سائنسدانوں نے اصل وجہ بتادی

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کے سبب ہونے والے لاک ڈاﺅن کے دوران اکثر لوگوں کا وزن بڑھ گیا، جس کی وجہ عام لوگ گھر میں فارغ بیٹھنا اور کھانا خیال کر رہے تھے لیکن اب سائنسدانوں نے اس کی اصل وجوہات بیان کر دی ہیں۔میل آن لائن کے مطابق سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ لاک ڈاﺅن کے دوران لوگوں کے زیادہ موٹاپے کا شکار ہونے کی وجہ وہ ذہنی دباﺅ ہے جو کورونا وائرس کی وباءاور لاک ڈاﺅن کی وجہ سے لوگوں کو برداشت کرنا پڑا۔ اس ذہنی دباﺅ کے نتیجے میں لوگوں کی خوراک بھی بڑھ گئی اور اس پر گھر میں فارغ بیٹھنے اور ورزش کے فقدان نے سونے پر سہاگے کا کام کیا۔

رپورٹ کے مطابق سائنسدانوں نے لاک ڈاﺅن کے دوران لوگوں کے موٹاپے کا شکار ہونے کی وجوہات کی ایک فہرست بیان کی ہے جس میں ہمہ وقت بچوں کے ساتھ بھی رہنا ہے۔ سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ بچے چونکہ ہمہ وقت کچھ نہ کچھ کھاتے رہتے ہیں، چنانچہ اس سے ان بڑوں کو بھی زیادہ کھانے کی ترغیب ملتی ہے جو بچوں کے ساتھ زیادہ رہتے ہیں۔اس تحقیق میں سائنسدانوں نے 222سلمنگ ورلڈ ممبرز پر تحقیق کی۔ تحقیقاتی ٹیم کی سربراہ ڈاکٹر سارا الزبتھ بینیٹ کا کہنا تھا کہ ”لاک ڈاﺅن نے لوگوں کے کھانے پینے کے رجحان اور پسند و ناپسند پر بھی بہت گہرااثر چھوڑا ہے۔ اس کے علاوہ لوگوں کی سرگرمیاں بھی یکسر ختم ہو کر رہ گئی، جس کی وجہ سے وہ موٹاپے کا شکار ہونے لگے۔ اگرچہ اس کی دیگر بھی کئی وجوہات ہیں لیکن سب سے بڑی وجوہات میں ذہنی دباﺅ، زیادہ کھانا اور ورزش کم ہونا شامل ہیں۔“

مزید :

تعلیم و صحت -