دریائے سندھ کی سطح تیزی سے بڑھنے لگی،سنگین خدشہ پیدا ہو گیا

دریائے سندھ کی سطح تیزی سے بڑھنے لگی،سنگین خدشہ پیدا ہو گیا
دریائے سندھ کی سطح تیزی سے بڑھنے لگی،سنگین خدشہ پیدا ہو گیا

  

سکھر(ڈیلی پاکستان آن لائن)  دریائے سندھ کی سطح تیزی سے بڑھنے لگی، سندھ کے تینوں بیراجوں پر 24 گھنٹے میں ہزاروں کیوسک کا اضافہ، گڈو اور سکھر بیراجوں پر نچلے درجے کا سیلاب برقرار، کچے کے مزید کئی دیہات زیر آب۔

نجی ٹی وی کے مطابق ملک میں جاری بارشوں کے باعث دریائے سندھ میں پانی کی سطح بھی تیزی سے بلند ہورہی ہے ،آبپاشی ذرائع کے مطابق سندھ کے تینوں بیراجوں پر پانی کی سطح میں 24 گھنٹوں کے دوران کئی ہزار کیوسک کا اضافہ ہوگیا ہے جس کی وجہ سے تینوں بیراجوں کے درمیان میں واقع کچے کے علاقے کے کئی دیہات زیر آب آگئے ہیں جبکہ گڈو اور سکھر بیراجوں پر نچلے درجے کا سیلاب برقرارہے اور سطح تیزی سے بلند ہورہی ہے۔

آبپاشی ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر گڈو کے مقام پر اسی طرح سطح بڑھتی رہی تو وہاں پر4 ستمبر تک نچلے درجے کی سیلابی صورتحال درمیانے درجے کی سیلابی صورتحال میں تبدیل ہوجائے گی جبکہ گڈو بیراج پر اس کی طرح صورتحال کے بعد وہاں سے ڈاؤن سٹریم میں سکھر کی جانب سے آمد سے زیادہ پانی چھوڑا جارہاہے،گڈو بیراج پر 38 ہزار کیوسکس اضافے کے بعد پانی کی آمد 3 لاک 8 ہزار کیوسکس ریکارڈ،سکھر بیراج پر 12 ہزار کیوسکس اضافے کے بعد پانی کی آمد 2 لاکھ 61 ہزار کیوسکس ریکارڈ کیا گیاہے جس میں آئندہ چند گھنٹوں میں مزید اضافہ کا امکان ہے۔

دریائے سندھ میں سطح آب بلند ہونے کے بعد دریائے سندھ کے حفاظتی بندوں اور پشتوں پر پانی کا دباؤ بڑھنے لگا ہےجبکہ دوسری جانب کچے میں لوگوں کے نقل مکانی کا امکان کافی حد تک بڑھ گیا۔

مزید :

علاقائی -سندھ -سکھر -