انتخابات میں دہشت گردی کے خدشات

انتخابات میں دہشت گردی کے خدشات

عام انتخابات کی تیاریاں کئی ماہ سے جاری ہیں،جس میں محنتی اور دیانتدار الیکشن کمیشن سمیت کئی اہم اداروں کے افسراورملازمین کا کردارقابل تعریف ہے۔پھر بھی سیاست دانوں کاخیال ہے کہ یہ ساراکام ہماری مرضی کے خلاف ہے ۔ایسی کون سی بات ہے جو سیاست دانوں کوپر یشان کر رہی ہے کہ وہ محب وطن ،محنتی اوردیانتدارافسران اورملازمین پرشک کررہے ہیں.... حالانکہ ملک میں آئندہ عام انتخابات کے دوران انتخابی معاملات کواحسن انداز میں مکمل کرنے کے لئے6 لاکھ سرکاری ملازمین کی خدمات حاصل کرنے کافیصلہ کیاگیا ہے۔ان 6 لاکھ ملازمین میں مسلح افواج کے لوگ شامل نہیںہیں۔الیکشن کمیشن نے آئندہ عام انتخابات کے لئے بیشترانتظامات کوحتمی شکل دے دی ہے، حساس ترین پولنگ سٹیشنوں کی فہرست جلد پاک فوج کے حوالے کر دی جائے گی، جہاں فوجی تعینات ہوں گے۔

الیکشن کمیشن سمیت دیگر اداروں کے عہدیدار یہ کہہ چکے ہیں کہ سیکیورٹی کے خدشات آئندہ الیکشن کے لئے سب سے بڑا چیلنج ہیں۔پاک فوج اس سے قبل بھی الیکشن کمیشن کو یہ یقین دہانی کرا چکی ہے کہ انتخابات کے دوران امن و امان کو یقینی بنانے کے لئے ہر ممکن معاونت کی جائے گی۔ سپریم کورٹ آف پاکستان نے الیکشن کمیشن کی جانب سے شائع کرائے گئے نئے کاغذات نامزدگی کو درست اور آئین و قانون کے مطابق قرار دے دیا ہے۔ عدالتی حکم میں کہا گیا ہے کہ شفاف انتخابات کے لئے الیکشن کمیشن آئین کے آرٹیکل 218 پر سختی سے عمل کرے۔ عدالت نے قرار دیا کہ پوری قوم اس بات پر متحد و متفق ہے کہ ان کے نمائندے کرپشن میں لتھڑے ہوئے نہ ہوں۔ ووٹروں کو حق ہے کہ وہ اپنے امیدوار کے بارے میں تمام کوائف سے آگاہ ہوں۔ عدالت نے قرار دیا کہ نامزدگی فارم میں تبدیلی قواعد میں تبدیلی نہیں، کوئی قانون الیکشن کمیشن کے اختیارات پر حاوی نہیں ہو سکتا۔ عدالت نے نامزدگی فارم کو عدالتی فیصلے کا حصہ بنا دیا۔

شیخوپورہ شہر اور قرب و جوار کی آبادےوں مےں لوڈشےڈنگ کا دورانےہ 18گھنٹے سے بھی تجاوز کر گےا، ہاو¿سنگ کالونی قےام پور فےڈر،ابراہےم کالونی مےں 9گھنٹے کی مسلسل اور طوےل لوڈشےڈنگ کی وجہ سے لوگ پانی کی بوند بوند کو ترس گئے۔ان علاقوں کے سےنکڑوں صارفےن نے لےسکو حکام کے خلاف احتجاجی مظاہرے کئے اور الزام عائد کےا کہ فےکٹری مالکان کو مبےنہ طور پر 10ہزار روپے فی گھنٹہ کے حساب سے بجلی فروخت کی جا رہی ہے اور شہرےوں کو غےرقانونی طرےقے سے لوڈشےڈنگ کے عذاب مےں مبتلا کےا ہواہے،۔ شہریوں نے حکمرانوں کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے کہاکہ لوڈشیڈنگ میں اضافہ موجودہ حکمرانوں کی طلباء وطالبات کے خلاف گہری سازش ہے۔

آئندہ انتخابات میں دہشت گردی کے خدشات سب سے بڑا چیلنج ہیں۔2008ءمیں پاکستان پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین اور موجودصدرپاکستان آصف علی زرداری نے ایک خط امریکی صدر اوباماکو لکھا تھا،جس میں سابق صدرپاکستان جنرل (ر)پرویزمشرف پرالزام لگایاگئے تھاکہ ان کی موجودگی میںشفاف انتخابات نہیں ہوسکتے۔ اب الزام کس پر آے گا؟....کیونکہ اس وقت بھی مسلسل اور طوےل لوڈشےڈنگ،بم دھماکے،اغوائ،دہشت گردی اور ہرطرف خوف کی ایک لہردوڑرہی ہے۔کرپشن کے کئی کیس عدالتوں میں زیرسماعت ہیں۔کون کیاہے؟ اب عوام کو بھی معلوم ہوگیا ہے۔ آئندہ عام انتخابات کے دوران انتخابی معاملات کواحسن انداز میں مکمل سیکیورٹی سمیت دیگر اہم اقدمات کیاجاچکے ہیں۔انشاءاللہ یہ سب اقدمات آئندہ عام انتخابات میںامن کی ضمانت ثابت ہوں گے۔      ٭

 

مزید : کالم


loading...