انتخابی مہم و پولنگ امیدواروں انتظامیہ گاریوں کی ایڈوانس بکنگ کر والی

انتخابی مہم و پولنگ امیدواروں انتظامیہ گاریوں کی ایڈوانس بکنگ کر والی
انتخابی مہم و پولنگ امیدواروں انتظامیہ گاریوں کی ایڈوانس بکنگ کر والی

  


                                                                                           لاہور (اسد اقبال) عام انتخابات سے ایک ماہ قبل ہی سیاسی جماعتوں کے امیدواروں کی طرف سے انتخابی مہم، ووٹ ڈالنے کے لئے ووٹروں کی آمدورفت اور سرکاری عملے کو منزل تک پہنچانے کے لئے انتظامیہ کی طرف سے بڑے پیمانے پر چھوٹی و بڑی گاڑیوں کی بکنگ کا سلسلہ شروع کر دیا گیاہے۔ ٹرانسپورٹروں سے سفارشوں اور دباﺅ کی بناءپر بات پکی کی جارہی ہے جبکہ الیکشن میں کمائی کرنے کے لئے کمیشن مافیا نے بھی لنگوٹ کس لئے ہیں اور فریقین کے درمیان معاملات طے کروانے کے لئے باقاعدہ ایگریمنٹ بھی وضع کئے گئے ہیں۔ واضح رہے کہ ٹرانسپورٹرز رہنماﺅں نے بھی عام انتخابات میں استعمال ہونے والی گاڑیوں کے لئے سیاسی امیدواروں سے 50 فیصد ایڈوانس بکنگ شرط عائد کردی ہے۔ روزنامہ پاکستان کی جانب سے سروے رپورٹ کے مطابق عام انتخابات کے قریب آنے پر باقاعدہ طور پر ٹرانسپورٹرز سے بات چیت کا سلسلہ جاری ہے۔ جبکہ ن لیگ کے امیدواروں نے لاہور کے کئی ایک حلقوں میں چھوٹی گاڑیاں بک کرتے ہوئے اپنی تشہیری مہم شروع کردی ہے جبکہ امیدواران نے عام انتخابات کے لئے ایک حلقہ میں 20 سے 30 تک گاڑیوں کی بکنگ کے لئے کمیشن مافیا کا سہارا لیتے ہوئے بکنگ کرا رہے ہیں۔ ٹرانسپورٹروں نے بتایا کہ بااثر سیاسی مافیا دباﺅ ڈالتے ہوئے کم قیمت پر گاڑیاں بک کرنے کا کہہ رہے ہیں۔ علاوہ ازیں ضلعی حکومت کی ہدایت پر آر ٹی اے نے الیکشن کمیشن کے عملہ کو گاڑیاں فراہم کرنے کے لئے محکموں کے چھوٹے افسران کی گاڑیاں زبردستی ضبط کرتے ہوئے الیکشن کمیشن کو بھجوانی شروع کردی ہیں۔ سیکرٹری آر ٹی اے محسن رشید نے پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن سروے کے لئے محکمہ نے 22 گاڑیاں فراہم کی ہیں جبکہ مزید گاڑیوں کے حوالے سے ابھی تک کوئی ہدایات موصول نہیں ہوئی ہیں۔ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے ٹرانسپوٹرز بلوچ ٹرانسپورٹ کے نادر بلوچ، بشیر سیال، طارق خان پیرانس، شاہد اور محمد نعیم نے کہا کہ الیکشن کے دنوں میں چھوٹی و بڑی گاڑیوں کی بکنگ کےلئے سیاسی امیدواران نے رابطے کا سلسلہ شروع کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹرانسپورٹرز کو ہر الیکشن میں نقصان کا سامنا کرنا پڑتا ہے جبکہ گاڑیوں کی توڑ پھوڑ بھی ٹرانسپورٹروں کو برداشت کرنا پڑتی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ٹرانسپورٹروں نے فیصلہ کیا ہے کہ عام انتخابات میں فراہم کی جانے والی گاڑیوں کی 50 فیصد ایڈوانس شرط ہوگی۔

مزید : الیکشن ۲۰۱۳


loading...