بسنت سے متعلق کوئی فیصلہ نہیں ہوا ایس ایچ او سے لے کر سےکٹری تک تگبدیل کریں گے

بسنت سے متعلق کوئی فیصلہ نہیں ہوا ایس ایچ او سے لے کر سےکٹری تک تگبدیل کریں گے ...

 لاہور( سپیشل رپورٹر) نگران وزیراعلیٰ پنجاب نجم سیٹھی نے کہا ہے کہ سیاسی جماعتوں کے رہنماﺅں سے ملاقاتیں انتہائی سودمند رہی ہیں اور عام انتخابات کے شفاف اورمنصفانہ انعقاد کے حوالے سے سیاسی رہنماﺅں سے مشاورت کے مثبت نتائج سامنے آئے ہیں۔ میں نے جس سیاسی رہنما سے ملاقات کی ہے، انہوںنے ایک ہی بات کہی ہے کہ نگران سیٹ اپ شفاف انتخابات کے انعقاد کو یقینی بنائے، ہم کسی افسر کی تعیناتی کے لئے کسی قسم کی سفارش نہیں کریں گے۔پنجاب میں منصفانہ انتخابات کے انعقاد کے لئے ایس ایچ او سے لے کر سیکرٹری تک کی تبدیلی کے لئے ہوم ورک مکمل کرلیاہے۔ چیف سیکرٹری کے عہدہ سنبھالنے پر بیورو کریسی میں ردوبدل کیاجائے گا اور ایک ایسی ٹیم تشکیل دیں گے جس پر کسی کو شکایت نہ ہو۔ انتخابات کا شفاف اور منصفانہ انعقاد نگران سیٹ اپ کی قومی ذمہ داری ہے جسے بطریق احسن نبھائیں گے۔ پنجاب پاکستان کا دل ہے،اگر ہم خدانخواستہ یہاں شفاف انتخابات کے انعقاد کی ذمہ داری نہ نبھا سکے تو پورے ملک کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔ نگران سیٹ اپ منصفانہ انتخابات کے انعقاد کی ذمہ داری قومی فرض سمجھ کر نبھائے گااور ایسے شفاف انتخابات کرائیں گے کہ کوئی ان پر انگلی نہ اٹھا سکے۔ان خیالات کا اظہارانہوںنے یہاںپاکستان پیپلزپارٹی کے راہنمااور سابق اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی راجہ ریاض احمد کی رہائش گاہ پر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر پاکستان پیپلزپارٹی سینٹرل پنجاب کے صدر منظور احمد وٹو اور دیگر رہنما بھی موجود تھے۔وزیراعلیٰ نجم سیٹھی نے کہاکہ بیورو کریسی میں ردوبدل الیکشن کمیشن آف پاکستان کے احکامات کی روشنی میں کیا جائے گا اور بیوروکریسی میں تبدیلی کاعمل ایسے شفاف انداز میں کیاجائے گاکہ کسی سیاسی جماعت کو شکایت کا موقع نہیں ملے گا۔انہوںنے کہاکہ انسپکٹرجنرل پولیس پنجاب آفتاب سلطان ایک محنتی او رفرض شناس آفیسر ہے اور ان کی تعیناتی کاسب نے خیرمقدم کیاہے۔ اسی طرح بیوروکریسی میں تبدیلی کا عمل شفاف طریقے سے مکمل کیاجائے گا۔غلطیاں سب سے ہو سکتی ہیں لیکن ہم کوشش کریں گے کہ مشاورت سے بہترین ٹیم تشکیل دیں۔ بسنت کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوںنے کہاکہ اس حوالے سے ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں کیاگیاہے تاہم مشاورت کا عمل جاری ہے اورآئندہ دو تین روز میں اس ضمن میںفیصلہ کرلیاجائے گا۔قوم پریشانی،ڈپریشن اور مایوسی کی صورتحال سے دوچارہے۔ ان حالات میں ضروری ہے کہ لوگوں کے چہروں پر مسکراہٹیں لائی جائیں۔ اسلام آباد میں صحافیوں سے ملاقات کے دوران میں نے خود بسنت کے حوالے سے ان سے مشورہ لیا تو ان کی رائے تھی کہ اگرکیمیکل ڈور سے گلے کٹنے اور دیگر حادثات کو روکا جاسکتا ہے تو بسنت منانے میں کوئی حرج نہیں۔ اسی طرح سیاسی رہنماﺅں نے بھی اسی رائے کا اظہار کیاہے۔ ان تمام آرا اور تجاویز کا جائزہ لیاجارہاہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ صرف پتنگ بازی ہی نہیں ہونی چاہئیے بلکہ پورے پنجاب میں میلے ،موسیقی، مشاعرے اور آتش بازی جیسی تفریحی سرگرمیاں ہونی چاہئیںجن میں مقامی انتظامیہ اور لوگوں کی بھرپور شمولیت ہو۔ انہوںنے کہاکہ اگر پنجاب حکومت حادثات کی روک تھام کرسکتی ہے تو پھر بسنت جیسے تہوار منانے میں کوئی قباحت نہیں۔ لیکن اس بارے میں فیصلہ مکمل مشاورت سے ہی کیاجائے گا۔ انہوںنے کہاکہ میں لاہوری ہوں، میرا جی چاہتا ہے کہ تفریحی سرگرمیاں ہونی چاہئیں تاہم اس حوالے سے کوئی جذباتی فیصلہ نہیں کروں گا۔ پالیسی میں تبدیلی کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں نجم سیٹھی نے کہاکہ نگران سیٹ اپ کی ذمہ داری عام انتخابات کا شفاف انعقادہے۔ ہم نئی سڑکیں یا کوئی میٹرو نہیں بنارہے۔ پالیسیاں قوم کی امانت ہیں اور انہیں عوام کے منتخب نمائندے ہی آگے بڑھانے کا حق رکھتے ہیں۔ کابینہ کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میںانہوں نے کہاکہ تین نئے وزراءجلد حلف اٹھا رہے ہیں۔ بہت سے افسران کھڈے لائن لگے ہوئے ہیں۔ ان میں یقینا کچھ اچھے ،محنتی اور دیانتدار بھی ہوں گے۔ اداروںکو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اچھے افسران کے بارے میں معلومات فراہم کریں۔ مشاورت سے ایک ایسی ٹیم تشکیل دیں گے جو شفاف انتخابات کے انعقاد میں معاون ثابت ہوگی۔پاکستان پیپلزپارٹی سینٹرل پنجاب کے صدر میاںمنظور وٹونے کہاکہ نجم سیٹھی کی بطور وزیراعلیٰ تعیناتی کا خیرمقدم کرتے ہیں۔ وہ قدرتی طور پر ایک غیرجانبدار انسان ہیں۔ بطور سینئر صحافی انہوںنے غیرجانبدارانہ اور باوقار کردار ادا کیاہے۔قوم نازک موڑ پر کھڑی ہے لیکن یہ خوش آئند امر ہے کہ اقتدار کی منتقلی غیرجانبدار نگران سیٹ اپ کے ذریعے ہونے جارہی ہے۔جس سے یقینا جمہوریت اور جمہوری ادارے مستحکم ہوں گے۔ وزیراعلیٰ پنجاب نجم سیٹھی سے پوری توقع ہے کہ وہ پنجاب میں غیر جانبدارانہ ،منصفانہ اور شفاف انتخابات کے انعقاد کو یقینی بنائیں گے۔ قبل ازیں وزیراعلیٰ نجم سیٹھی نے راجہ ریاض احمد کی رہائش گاہ پر پیپلزپارٹی کے رہنماﺅں میاں منظور احمد وٹو، عزیز الرحمن چن، فاروق گھرکی، منیر احمد خان ، زکریا بٹ او رراجہ ریاض احمد سے ملاقات کی۔ ملاقات میں عام انتخابات کے شفاف اور پرامن انعقاد کے حوالے سے بات چیت ہوئی۔ دریں اثناءآئی جی آفتاب سلطان سے ملاقات کے دوران بات چیت کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب نجم سیٹھی نے کہاہے کہ امن وامان کی صورتحال کو بہتر سے بہتر بنانا ہماری ترجیح ہے-نگران حکومت صوبے میں امن و امان اور سکیورٹی کے چیلنج سے نمٹنے کے لئے پوری طرح تیار ہے-امن وامان اور سکیورٹی کے چیلنج سے نمٹنے کو ناممکن نہیں سمجھتے-قانون نافذ کرنے والے ادارے الےکشن کے پرامن انعقاد کو یقینی بنانے کے لئے ہر ممکن اقدامات اٹھائیں۔ عام انتخابات میں ووٹر کو اپنے حق رائے دہی کے استعمال کے لئے آزادانہ اور پرامن ماحول فراہم کیا جائے۔نگران وزیراعلیٰ نے کہاکہ پر امن ماحول کے قیام کے بغیرآزادانہ طو رپر سیاسی ، سماجی اور معاشی سرگرمیاں ممکن نہیں- پنجاب حکومت اس حوالے سے اپنے فرائض سے پوری طرح آگاہ ہے- امن و امان کی صورتحال پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا- انہوںنے کہاکہ شہریوں کے جان ومال کا تحفظ پولیس کی ذمہ داری ہے-پولیس جرائم کنٹرول کرنے کے لئے اپنی تمام تر صلاحیتیںبروئے کار لائے-وزیراعلیٰ نے آفتاب سلطان کو آئی جی پولیس پنجاب کا عہدہ سنبھالنے پر مبارکباددی اور اس امید کا اظہار کیا کہ نئے انسپکٹر جنرل پولیس امن وامان کی صورتحال کو مزید بہتر بنانے کے لئے اپنا بھرپورکردارادا کریںگے۔

نجم سیٹھی

مزید : صفحہ اول


loading...