کراچی میں رینجرز ہیڈ کوارٹر پر حملہ، چار اہلکار شہید، سیکیورٹی اداروں کو نشانہ بنائیں گے: طالبان

کراچی میں رینجرز ہیڈ کوارٹر پر حملہ، چار اہلکار شہید، سیکیورٹی اداروں کو ...
کراچی میں رینجرز ہیڈ کوارٹر پر حملہ، چار اہلکار شہید، سیکیورٹی اداروں کو نشانہ بنائیں گے: طالبان

  


کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) رینجرز ہیڈ کوارٹر کے قریب دھماکے کے نتیجے میں چار اہلکار شہید اور تین اہلکاروں سمیت سات افراد زخمی ہو گئے جبکہ ہیڈ کوارٹر کے باہر ٹرک تباہ ہو گیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق کورنگی نمبر پانچ میں بھٹائی رینجرز کے 43 ون ہیڈ کوارٹر کے قریب موٹر سائیکل سواروں نے دستی بم مارا اور فرار ہو گئے، زخمیوں کو ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے جن میں سے دو کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے۔ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے علاقے کا محاصرہ کر لیا۔ نجی ٹی وی جیو نیوز کے مطابق نامعلوم افراد نے رینجرز ہیڈ کوارٹر میں داخل ہونے کی کوشش کی جس دوران مزاحمت پر حملہ آوروں نے ہیڈ کوارٹر میں داخل ہونے والے ٹرک پر دستی بم مارا جس سے رینجرز کے آٹھ اہلکار زخمی ہو گئے جنہیں ہسپتال منتقل کرنے کے دوران عرفان، امانت اور سیف اللہ راستے میں دم توڑ گئے جبکہ ایک اہلکار ہسپتال دوران علاج دم توڑ گیا۔ جناح ہسپتال کی ایم ایس ڈاکٹر سیمی جمال کے مطابق رینجرز کے چار زخمی اہلکاروں میں سے ایک کی حالت نازک ہے۔ جیو نیوز کے مطابق حملے میں تین رینجرز اہلکار ہدایت علی، واجد اور عمران سمیت دو راہگیر بھی زخمی ہوئے اور گاڑی کو بھی نقصان پہنچا۔ پولیس کے مطابق دھماکہ خیز مواد میں بال بیرنگ اور کیلیں بھی استعمال کی گئیں۔ صدر مملکت آصف علی زرداری اور نگران وزیراعظم میر ہزار خان کھوسو نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ طلب کرلی ہے اور زخمیوں کو بہترین طبی امداد فراہم کرنے کی ہدایت کی۔ کالعدم تحریک طالبان نے دھماکے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے اور کہا ہے کہ سیکیورٹی ادارے انہیں نشانہ بناتے ہم سیکیورٹی اداروں کو نشانہ بنائیں گے۔ پولیس کے مطابق رینجرز کے ٹرک پر دستی بم سے حملہ نہیں کیا گیا بلکہ دھماکہ خیز مواد سڑک کے کنارے نصب کیا گیا تھا جس کیلئے ریموٹ ڈیوائس استعمال کی گئی۔

مزید : کراچی /Headlines


loading...