حکومت پٹرولیم مصنوعات پرزیادہ منافع کما رہی ہے: ڈاکٹر مرتضیٰ مغل

حکومت پٹرولیم مصنوعات پرزیادہ منافع کما رہی ہے: ڈاکٹر مرتضیٰ مغل

  

لاہور (کامرس ڈیسک) پاکستان اکانومی واچ کے صدر ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے کہا ہے حکومت پٹرولیم مصنوعات پر ضرورت سے زیادہ منافع کما رہی ہے جبکہ گزشتہ تین ماہ کے دوران انکی قیمت میں پانچ گنا اضافہ کیا گیا ہے جس سے عام آدمی اور معیشت پر دباؤ بڑھا ہے۔ اوگرا کی جانب سے تیل کی قیمتوں میں تیرہ روپے فی لیٹر تک اضافہ کی تجویز عوام دشمنی ہے۔ ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے کہا کہ درامد شدہ ایندھن پر ٹیکسوں کی بھرمار سے عام آدمی اور معیشت متاثر ہو رہی ہے جبکہ ایران و افغانستان سے ایندھن کی سمگلنگ میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔ایران کے پٹرول کے علاوہ گیس کی بلا روک ٹوک سمگلنگ بھی جاری ہے۔ایران سے سمگل ہونے والی ایل پی جی کل ملکی کھپت کا تیس فیصد ہے جس سے مقامی صنعت کے مسائل میں اضافہ ہوا ہے۔تیل و گیس کی سمگلنگ سے قومی خزانے کو اربوں روپے کا نقصان ہو رہا ہے اس دھندے میں بڑی مچھلیاں ملوث ہیں ۔ ایندھن پر ضرورت سے زیادہ ٹیکس ایف بی آر کی نا اہلی اور ناکام پالیسیوں کا ثبوت ہے۔ اگر برامدات میں مسلسل کمی نہیں آ رہی ہوتی یا ایف بی آر محاصل جمع کر رہا ہوتا تو حکومت کو پٹرول اور ڈیزل وغیرہ پر اتنے ٹیکس نہ لگانے پڑتے نہ بینک ٹرانزیکشن پر ودہولڈنگ ٹیکس عائد کرنے اور اس میں بار بار اضافہ کی ضرورت پیش آتی۔

دہشت گردی کے خلاف جنگ جیتنے کیلئے اشرافیہ کو ٹیکس کے جال میں جکڑنا ضروری ہے کیونکہ عوام بالادست طبقہ کیلئے مزید قربانیاں دینے کے قابل نہیں ہیں۔

ٓٓؒ ٗ

مزید :

کامرس -