آصف اور وحیدگدی کے خواہشمند تھے ، جرگہ بلایا گیا تھا ، لوگ آتے اور قتل ہوتے رہے

آصف اور وحیدگدی کے خواہشمند تھے ، جرگہ بلایا گیا تھا ، لوگ آتے اور قتل ہوتے ...

  

سرگودھا ( مانیٹرنگ ڈیسک / آن لائن) چک 95 شمالی میں لرزہ خیز واردارت گدی نشینی کے جھگڑے کا شاخسانہ ہونے کا انکشاف ہوا ہے اور ذرائع کا کہنا ہے کہ قتل ہونے والے تمام افراد کو جرگہ کیلئے بلایا اور پھر نشہ آور چیز کھلا کر انہیں ڈنڈوں اور چھریوں کے وار کر کے قتل کر دیا گیا۔ نجی ٹی وی کے مطابق یہ سارا واقعہ گدی نشینی کے حوالے سے ہے کیونکہ ملزم عبدالوحید اور پیر علی محمد گجر کے بیٹے آصف کے درمیان تنازعہ چل رہا تھا۔ علی محمد گجر اسلام آباد میں رہتا تھا اور سرگودھا منتقل ہو گیا جہاں ایک تھڑے پر بیٹھ کر دم درود کیا کرتا تھا۔ علی محمد گجر کی 2 سال قبل وفات ہوئی تو اس کے بیٹے آصف نے اسی جگہ پر بیٹھ کر دم درود کرنے کا کام شروع کر دیا اور اس طرح دونوں کے درمیان گدی نشینی کا تنازعہ چل نکلا۔ ذرائع کے مطابق آصف اور ملزم عبدالوحید،دونوں کی گدی کے خواہشمند تھے اس تنازعہ کے حل کیلئے جرگہ بلایا گیا تھا قتل ہونے والے بیشتر افراد کا تعلق ایک ہی برادری کے ساتھ ہے جو صلح صفائی کیلئے بلائے گئے جرگے میں شرکت کیلئے آئے تھے۔ ذرائع کے مطابق جیسے جیسے لوگ جرگے میں شرکت کیلئے آتے رہے انہیں دربار کے ساتھ متصل مکان میں لے جا کر نشہ آور غذا کھلا کر قتل کیا جاتا رہا۔

جرگہ

مزید :

صفحہ اول -