دھابیجی اسٹیشن پر وولٹیج کی کمی بیشی، شہر کو پانی کی فراہمی تعطل کا شکار

دھابیجی اسٹیشن پر وولٹیج کی کمی بیشی، شہر کو پانی کی فراہمی تعطل کا شکار

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر ) کراچی کو پانی فراہم کرنے والے واٹربورڈ کے سب سے اہم دھابیجی پمپنگ اسٹیشن پر کے الیکٹرک کی جانب سے بجلی کی رو (وولٹیج) میں کمی بیشی کا سلسلہ 6روز گزرجانے کے بعد بھی ختم نہیں ہوسکا ،اتوار کو بھی تمام دن برقی رو میں کمی بیشی جاری رہی ،کراچی کو کے ٹو کے نظام آب سے 35ملین گیلن پانی فراہم کرنے والا ایک اور پمپ خراب ہوگیا،6روز میں خراب ہونے والے پمپوں کی تعداد 3ہوگئی ہے جبکہ شہر کو 35ملین گیلن پانی فراہم نہیں کیا جاسکے گا،ایم ڈی واٹربورڈ سید ہاشم رضا زیدی نے سنگین صورتحال کا نوٹس لیتے ہوئے ادارے کے انجینئرز اوردیگر فنی و ٹیکنیکل عملے کو چوکنا رہنے کے احکامات دیدیئے ہیں ،تفصیلات کے مطابق دھابیجی پمپنگ اسٹیشن جہاں سے کراچی کے شہریوں کو پانی کی فراہمی کی جاتی ہے گذشتہ 6 روز سے بجلی کی رو میں کمی بیشی سے دوچار ہے جس کے باعث دھابیجی پمپنگ اسٹیشن کے پمپس اور مشینری کو خطرات لاحق ہیں ،گذشتہ 6 روز کے دوران دھابیجی پمپنگ اسٹیشن کے 3پمپس اور دیگر مشینری خراب ہوچکی ہے ،اس صورتحال میں کراچی کے شہریوں کو متواتر پانی کی فراہمی متاثر ہورہی ہے،جبکہ ادارے کو بھاری مالی نقصان بھی برداشت کرنا پڑرہا ہے ،ایم ڈی واٹربورڈ نے ڈی ایم ڈی ٹیکنیکل سروسز اسد اللہ خان کو ہدایت کی ہے کہ دھابیجی پمپنگ اسٹیشن سے کراچی کو پانی کی فراہمی ممکن بنانے کے لئے فوری اقدامات کئے جائیں، انجینئرز اور دیگر فنی و ٹیکنیکل عملے کو چوکنا رکھا جائے، واضح رہے کہ واٹربورڈ کے پمپنگ اسٹیشن کی مشینری خصوصاً پمپس کی مرمت پاکستان میں ممکن نہیں ہے اس کے لئے انگلینڈسمیت دیگرممالک سے وائنڈنگ منگوانی پڑتی ہے، اگر خدانخواستہ برقی رو میں کمی بیشی کا سلسلہ نہ رکا تو پمپنگ اسٹیشن کی دیگر مشینری و پمپس کو بھی نقصان پہنچ سکتا ہے جس کے باعث کراچی کو طویل عرصہ کیلئے پانی کی بدترین بحران کا سامنا کرناپڑسکتا ہے ،سندھ حکومت واٹربورڈ کے بجلی کے بل پابندی سے کے الیکٹرک کو ادا کررہی ہے تاہم کے الیکٹرک کی جانب سے اس ضمن میں کسی قسم کی کوئی کوشش نہیں کی جارہی ہے ،ایم ڈی واٹربورڈ کے الیکٹرک کے چیف ایگزیکٹیو کے نام ایک فوری مراسلہ بھی ارسال کرچکے ہیں تاہم اس پر بھی کوئی توجہ نہیں دی گئی ۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -