روسی صدر کی بیلاروسی ہم منصب سے ملاقات سے چند لمحے قبل سینٹ پیٹرز برگ کی زیر زمین ٹرین میں دھماکہ، 10 افراد ہلاک، متعدد زخمی

روسی صدر کی بیلاروسی ہم منصب سے ملاقات سے چند لمحے قبل سینٹ پیٹرز برگ کی زیر ...
روسی صدر کی بیلاروسی ہم منصب سے ملاقات سے چند لمحے قبل سینٹ پیٹرز برگ کی زیر زمین ٹرین میں دھماکہ، 10 افراد ہلاک، متعدد زخمی

  

ماسکو (ڈیلی پاکستان آن لائن) روس کے بڑے شہر سینٹ پیٹرز برگ کی زیر زمین ٹرین میں دھماکہ ہوا ہے جس کے نتیجے  میں   10 افراد ہلاک اور  متعدد افراد زخمی   ہوگئے ہیں جن میں سے بیشتر کی حالت سخت تشویشناک ہے۔ روسی صدر ولادی میر پیوٹن نے بیلاروس کے صدر سے سینٹ پیٹرز برگ میں ملاقات کرنا تھی تاہم ان کی ملاقات سے کچھ ہی دیر پہلے دھماکہ ہو گیا۔ روسی صدر نے کہا ہے کہ دھماکوں کی تحقیقات کی جا رہی ہیں اور ہر پہلو سے جائزہ لیا جا رہا ہے۔ دھماکوں کے بعد سیکیورٹی ہائی الرٹ کردی گئی جس دوران دوسرے میٹرو سٹیشن میں نصب ایک بم بر آمد ہوا  جسے ناکارہ بنادیا گیا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق دھماکہ سینٹ پیٹرز برگ میں ساڈویا ٹیکنالوجی انسٹی ٹیوٹ  کے میٹرو سٹیشن پر دھماکہ ہوا ہے جس کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک اور 50 سے زائد زخمی ہوگئے ہیں. دھماکے کے بعد امدادی کارروائیاں شروع کردی گئیں اور سینٹ پیٹرز برگ شہر میں زیر زمین میٹروٹرین سروس معطل کرکے تمام سٹیشنز بند کردیے گئے ۔ روسی انسداد دہشتگردی کمیٹی نے  دو دھماکوں میں 10 ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے۔  سیکیورٹی حکام کا کہنا ہے کہ   فونٹانکا اور وسطانیہ کے سٹیشنز کے درمیان سے ایک اور بم  کیا گیا  ہے، جسے ڈفیوز کردیا گیا ہے۔

 ساڈویا ٹیکنالوجی انسٹی ٹیوٹ پر ہونے والے دھماکے کے ایک عینی شاہد کا کہنا ہے کہ وہ برقی سیڑھیوں سے سٹیشن میں داخل ہو رہا تھا کہ اسی دوران ٹرین کے اندر زور دار دھماکہ ہوا جس سے بڑی تعداد میں لوگ متاثر ہوئے۔ دھماکے کے بعد مقامی میڈیا نے دعویٰ کیا کہ  سینایا پولشاڈ سٹیشن پر  بھی دھماکہ ہوا تاہم بعد ازاں سیکیورٹی حکام نے اس دھماکے کی تردید کردی اور بتایا کہ فونٹانکا اور وسطانیہ کے سٹیشنز کے درمیان سے ایک اور بم کیا گیا ہے، جسے ڈفیوز کردیا گیا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ دھماکے سے ٹرین کی بوگی بری طرح متاثر ہوئی ہے ۔ دھماکہ دہشتگردی کی واردات  ہے ، تخریب کاروں نے یہ بم میٹرو سٹیشن پر   نصب کیا اور  اسے ریموٹ کنٹرول ڈیوائس کے ذریعے اڑا دیا۔  دھماکے کے بعد سینٹ پیٹرز برگ کے علاوہ روس کے دیگر اہم شہروں میں بھی سیکیورٹی ہائی الرٹ کردی گئی ہے۔ دھماکے سے متاثر ہونے والا سٹیشن  دریائے فونتاکا کے نیچے بنایا گیا ہے۔

دوسری جانب روسی صدر ولادی میر پیوٹن نے بھی دھماکوں اور ان میں ہونے والی ہلاکتوں کی تصدیق کردی ہے۔ روسی صدر نے امدادی اداروں کو بروقت کارروائیاں اور سیکیورٹی ہائی الرٹ کرنے کی ہدایت بھی جاری کردی ہے۔ روسی صدر جو کہ سینٹ پیٹرز برگ میں ہی موجود ہیں نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ دھماکوں کا جائزہ لیا جا رہا ہے اور بہت جلد حقائق سامنے لائیں جائیں گے۔

مزید :

بین الاقوامی -