نوجوانوں کو بلیک میل کرنے کے مقدمہ میں ملوث اے ایس آئی نوشیروان سمیت 3ملزمان کا جسمانی ریمانڈ منظور

  نوجوانوں کو بلیک میل کرنے کے مقدمہ میں ملوث اے ایس آئی نوشیروان سمیت ...

  

ملتان (کورٹ رپورٹر)جوڈیشل مجسٹریٹ ملتان نے نوجوانوں کی غیر اخلاقی ویڈیوز بنا کر خواتین کے ذریعے بلیک میل کرنے کے مقدمہ میں ملوث اے ایس آئی نو(بقیہ نمبر53صفحہ6پر)

شیروان سمیت 3 ملزمان کا 2 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کر نے کا حکم دیا ہے۔دوسری جانب ملزم کے بیٹے نے ایس پی گلگشت احمد نواز پر جانبداری اور والد کو تشدد کا نشانہ بنانے کا الزام عائد کردیا ہے۔ قبل ازیں فاضل عدالت میں پولیس تھانہ الپہ کے مطابق ملزمان اے ایس آئی نوشیروان اور علی عمران سمیت 3 ملزمان کے خلاف الزام عائد کیا گیا تھا کہ چند افراد نے مبینہ طور پر گروہ بنا رکھا ہے جس میں خواتین بھی شامل ہیں جو امیر گھرانوں سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں سے موبائل فون کے ذریعے دوستی کرکے انہیں اپنے گھر بلاتیں اور ان کی خفیہ غیر اخلاقی ویڈیوز بناکر گروہ کے دیگر ارکان کے ذریعے متاثرہ نوجوانوں کو بلیک میل کیا جاتا۔ اگر متاثرہ شخص پولیس کے پاس مدد کے لئے جاتا تو گروہ میں شامل پولیس اہلکار متاثرہ شخص اور بلیک میلر کے درمیان پیسے کے لین دین کے ذریعے  معاملہ حل کرا دیتے، اس گروہ سے متاثرہ نوجوان بدنامی کے ڈر سے خاموش ہو جاتے۔پولیس نے عدالت کو مزید بتایا کہ ملزمان سے ویڈیوز اور رقوم کی برآمدگی ہونا باقی ہے اس لیے ملزمان کا جسمانی ریمانڈ منظور کیا جائے۔دریں اثناء گرفتار اے ایس آئی نوشیروان کے بیٹے عبید نے الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ با اثر افراد کے ایماء پر والد نوشیروان کو مقدمہ میں پھنسایا گیا ہے اور اب تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، ایس پی گلگشت احمد نواز نے با اثر افراد سے ساز باز کر رکھا ہے۔ تشدد کے خلاف عدالت سے میڈیکل کی اجازت لے لی ہے۔ اعلیٰ حکام سے استدعا ہے کہ مقدمہ کی غیر جانبدار انکوائری کرائی جائے۔

جسمانی ریمانڈ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -