کرونا سے نجات مربوط کو ششوں اور احتیاطی تدابیرسے ممکن ہے، محمود خان

کرونا سے نجات مربوط کو ششوں اور احتیاطی تدابیرسے ممکن ہے، محمود خان

  

بنوں (بیورورپورٹ)وزیراعلی خیبر پختونخوا محمود خان نے بنوں یونیورسٹی میں قائم قرنطینہ سنٹر کا دورہ کیااس دوران وزیر ٹرانسپورٹ شاہ محمد وزیر،ممبر صوبائی اسمبلی ملک پختون یار خان کمشنر بنوں و دیگر لائن افسران نے وزیرِ اعلیٰ کا استقبال کیا چیف سیکرٹری کاظم نیاز اور دیگر اعلی حکام بھی وزیر اعلی کے ہمراہ تھے کمشنر عادل صدیق نے وزیرِ اعلیٰ کو قرنطینہ سنٹر اور بنوں ڈویژن میں مہیا کی جانی والی سہولیات بارے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ پورے ڈویژن میں انیس جبکہ ضلع بنوں میں سات کرونٹائن سنٹرز ہیں،ضلع بنوں میں سترہ سو سے زائد افراد کو قرنطینہ میں رکھا جاسکتا ہے، پورے ڈویژن میں تین آئسولیشن سنٹرز ہیں، باہر ممالک سے آئے ہوئے گیارہ سو افراد کو ٹریس کیا گیا ہے،بنوں ڈویژن میں چونتیس کیس مشتبیہ تھے جس کے ٹیسٹ کیے گئے ہیں جہاں جہاں کرونا مریض ہیں آس پاس کے علاقوں کو کورنٹائن کیا گیاہے انفیکشن سپرے بھی باقاعدگی سے جاری ہے منافع خوری اور ذخیرہ اندوزوں کیخلاف اب تک چار سو انسپکشن کی جاچکی ہے تاکہ عوام کو اشیائے ضروریہ کی فراہمی میں دشواری نہ ہو بعد میں صحافیوں سے گفتگو کر تے ہوئے وزیرِ اعلی ٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے کہا کہ کسی بھی معاشرے کو ترقی کے منازل طے کر نے کیلئے وسائل کے بہتر استعمال اور لوگوں کے تعاون کی اشد ضرورت ہوتی ہے اور ہم بحثیتِ قوم کسی بھی مشکل حالات سے نکلنے کے عادی ہیں اور کرونا وائرس کی وباء سے نکلنے کیلئے تما م لوگوں کا متحد ہوناایک اچھی شگون ہے۔ انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس کی وباء سے نجات مربوط کوششوں اور احتیاطی تدابیر اختیار کرنے سے ممکن ہے اور اس سلسلے میں تمام وسائل بروئے کار لارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس کی وباء کے دوران لوگ اپنے گھروں سے نہ نکلے اور لوگوں سے میل جول تر ک کر کے اس کے پھیلاؤ کو روکیں۔اس دوران مشکلات کے ازالے کیلئے حکومت نے امدادی پیکج تیا ر کیا ہے اور شفافیت کے ساتھ لوگوں کو اس کی ترسیل ممکن بنائی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تبلیغی جماعت کے لوگوں کے بارے میں افواہوں پر دھیان نہ دیں یہ ہمارے وہ لوگ ہیں جو ملک کی بقا اور استحکام کیلئے ہمہ وقت دعاگو رہتے ہیں تاہم تمام ضروری سکریننگ،ٹیسٹنگ اور ان کی صحت یقینی بنانے کے لئے اقدامات کئے جارہے ہیں۔ کورونا وائرس کی وباء سے نمٹنے کیلئے صحافیوں کا کردار بہت اچھا ہے اور ہمارے صحافی بھائی اپنے لوگوں کو احتیاطی تدابیرسے متعلق آگاہ کر تے رہیں تاکہ اجتماعی کوششوں سے کورونا وائرس کو شکست دیا جا سکے۔وزیرِ اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے مزید کہا کہ ریاست کو اس مشکل صورتِ حال سے نکالنے کیلئے تمام ادارے اپنا اپنا کر دار فعا لیت سے ادا کر رہے ہیں اور انشا ء اللہ اس میں کوئی شک نہیں کہ ہم اس مشکل صورتِ حال سے جرات اور بہادری کے ساتھ نبردآزما ہوسکیں گے۔

پشاور(سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے کہا ہے کہ اس وقت ملک کے دیگر حصوں سے تعلق رکھنے والے تبلیغی جماعت کے جتنے بھی تبلیغی حضرات صوبے میں موجود ہیں،ان کو صوبائی حکومت کی طرف سے ہر طرح کی سہولیات فراہم کی جارہی ہیں اور آنے والے دنوں میں بھی فراہم کی جائیں گی، یہ ہمارے بھائی اور مہمان ہیں اور دین اسلام کی خدمت کے عظیم جذبے کے ساتھ اپنے گھروں سے نکلے ہیں۔ یہ جب تک بھی صوبے میں قیام کریں گے تو صوبائی حکومت اُن کو ہر طرح کی سہولیات فراہم کرے گی اور ان کا بھر پور خیال رکھا جائے گا اور جب یہ اپنے علاقوں کو جائیں گے تو ان کو محفوظ اور باعزت طریقے سے اُن کے علاقوں تک پہنچانے کا مناسب انتظام کیا جائے گاجس کے لئے انتظامیہ کو احکامات جاری کئے جاچکے ہیں۔ اُنہوں نے کہاکہ کورونا ایک متعدی وباء ہے جو ایک انسان سے تیزی کے ساتھ دوسرے انسان کو لگتی ہے اور اس کے پھیلاؤ کو روکنے کا واحد طریقہ سماجی رابطوں اور لوگوں کے درمیان میل جھول کو کم سے کم کرنا ہے۔ حکومت اس مقصد کیلئے صوبے کے ہر علاقے میں قرنطینہ مراکز قائم ہیں تاکہ اس وباء کو ایک انسان سے دوسرے انسان تک منتقلی کو روکا جا سکے، حکومت نے اس موذی وباء سے لوگوں کو محفوظ کرنے کیلئے سماجی رابطوں کو کم کرنے اور جزوی لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا ہے تاکہ لوگ خود کو اپنے گھروں تک محدود رکھیں۔ یقینا حکومت کے اس فیصلے کی وجہ سے عوام خصوصاً یومیہ اُجرت پر کام کرنے والے لوگوں کیلئے مشکلات درپیش ہیں جس کے پیش نظر صوبائی حکومت نے ان لوگوں کیلئے 32 ارب روپے کے ریلیف پیکج کی منظوری دی ہے جس سے صوبے کے 21 لاکھ گھرانے مستفید ہوں گے۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ کورونا کی وباء نہ صرف پاکستان بلکہ پوری عالمی دُنیا کیلئے ایک چیلنج بنا ہوا ہے جس سے موثر انداز میں نمٹنے کیلئے عوام کا تعاون ازحد ضروری ہے۔ اگر عوام اپنا تعاون جاری رکھیں گے تو انشاء اللہ ہم اس وباء کو شکست دینے میں کامیاب ہوں گے۔ ایک سوال کے جواب میں وزیراعلیٰ نے کہاکہ کورونا کے مریضوں کے علاج معالجے اور فرنٹ لائن پر کام کرنے والے طبی عملے کی حفاظت کو یقینی بنانے کیلئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کئے جارہے ہیں۔ ہسپتالوں میں وینٹلیٹرز، ٹیسٹنگ کٹس اور حفاظتی سامان کے حوالے سے کمی، خامیاں ضرور ہیں لیکن ان خامیوں کو دور کرنے کیلئے ہنگامی بنیاد وں پر سنجیدہ اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں اور ہر گزرتے دن کے ساتھ ان آلات کی فراہمی میں بہتری آرہی ہے۔وزیراعلیٰ نے ضلعی انتظامیہ کے حکام کو ہدایت کی کہ وہ ضلع میں اشیاء خوردنوش کی قیمتوں اور مارکیٹ کی صورتحال پر کڑی نظر رکھیں اور اشیاء ضروریہ کی ذخیرہ اندوزی میں ملوث عناصر کے خلاف سخت سے سخت کاروائی عمل میں لائے تاکہ عوام کو روزمرہ ضرورت کی اشیاء حکومت کی طرف سے مقررہ کردہ نرخوں پر آسانی سے دستیاب ہو۔

پاراچنار (نمائندہ پاکستان) وزیر اعلی خیبرپختونخوا محمود نے کہا ہے کہ کرونا ٹیسٹ کی سہولت ہر ڈویژن کو دی جارہی ہے اور پاراچنار میں میڈیکل کالج کے قیام اور ڈی ایچ کیو ہسپتال کے آپ گریڈیشن کے منصوبے پر کام جاری ہے اور تھری جی فور جی کھولنے کے حوالے سے وفاقی حکومت کو شفارس کروں گا پاراچنار کے دورے کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے خیبر پختونخوا کے وزیر اعلیٰ محمود نے کہا ہے کہ ضلع کرم میں کرونا سے عوام کو بچانے کیلئے کئے گئے انتظامات تسلی بخش ہیں اور اس میں مزید بہتری لائی جائے گی وزیر اعلی کا کہنا تھا کہ انہوں نے پاراچنار میں قرنطینہ سنٹر اور ایسولیشن سنٹر کا بھی دورہ کیا اور انتظامات کا بھی جائزہ لیا حکومت نے اب تک کئی سٹیپس لیے ہیں اور مزید اقدامات اٹھائے جارہے ہیں وزیر اعلی کا کہنا تھا کہ غریبوں اور ضرورت مندوں کو خصوصی ریلیف پیکج دیا جارہا ہے اور اکیس لاکھ خاندانوں کیلئے گیارہ ارب روپے مختص کئے گئے ہیں اور ہر ڈویژن کو کرونا ٹیسٹ کی سہولت فراہم کی جارہی ہے وزیر اعلی کا کہنا تھا کہ ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال پاراچنار کو اپ گریڈ کرنے اور میڈیکل کالج کے قیام مے منصوبے پر عمل ہورہا ہے اور تھری جی فورجی کھولنے کیلئے میں وفاقی حکومت سے رابطہ کروں گا ڈپٹی کمشنر ضلع کرم شاہ فہد نے وزیر اعلی کو ضلع کرم میں کرونا وائرس سے لوگوں کو بچانے کیلئے کئے گئے اقدامات اور آئیندہ ضروریات کے حوالے سے بریفنگ دی اس موقع پر ایم این اے ساجد طوری، سینیٹر سجاد طوری، ایم پی اے سید اقبال میاں، ایم پی اے ریاض شاہین کے علاؤہ خیبرپختونخوا کے چیف سیکرٹری کاظم نیاز بھی موجود تھے۔

مزید :

صفحہ اول -