ننھے فلسطینی بچے کے قتل کا ایسا انتقام لیا جائے کہ سینے ٹھنڈے ہو جائیں ٗ اسلامی جہاد کا پیغام

ننھے فلسطینی بچے کے قتل کا ایسا انتقام لیا جائے کہ سینے ٹھنڈے ہو جائیں ٗ ...

مقبوضہ بیت المقدس( اے این این )فلسطین کی مذہبی مزاحمتی تنظیم اسلامی جہاد نے اپنے کارکنوں سے کہا ہے کہ وہ انتہا پسند یہودی آبادکاروں کے ہاتھوں زندہ جلائے گئے معصوم شیرخوار فلسطینی بچے کا بدلہ لیں اور صہیونی ریاست کیخلاف مزاحمتی کارروائیاں تیز کردیں۔مرکزاطلاعات فلسطین کیمطابق اسلامی جہاد کے سیکرٹری جنرل رمضان الشیخ نے جماعت کے عسکری ونگ القدس بریگیڈ کو ایک مکتوب ارسال کیا ہے جس میں اس سے کہا گیا ہے کہ وہ شہید شیرخوار علی سعد دوابشہ کے وحشیانہ قتل کا بدلہ لیں۔رمضان الشیخ نے اپنے کارکنوں اور مجاہدین سے کہا ہے کہ ننھے علی دوابشہ کے خون کا ایسا انتقام لیا جائے تاکہ سینے ٹھنڈے ہوجائیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ننھے فلسطینی اور اس کے والدین کو زندہ جلانے والے وحشی درندے اور جنگی مخلوق ہیں جو کسی نرمی اور رحم کے مستحق نہیں۔ ایسے مجرموں کے ساتھ نہایت سختی کے ساتھ پیش آنا چاہیے۔اسلامی جہاد کے رہ نما نے کہا کہ انتہاپسند یہودی دہشت گردوں کی وجہ سے ہمارے وہ بچے بھی محفوظ نہیں جو شیرخوار ہیں اور اس کے باوجود فلسطینیوں پردہشت گردی کی پھبتی کسی جاتی ہے۔

فلسطینیوں کو اپنے بچوں کے دفاع کاحق حاصل ہے۔ شیرخوار بچے علی دوابشہ کا قتل پوری فلسطینی قوم کا قتل ہے اور قاتلوں کو کسی قیمت پرنہیں چھوڑا جائے گا۔خیال رہے کہ گذشتہ جمعہ کو یہودی آباد کاروں نے مغربی کنارے کے شمالی شہر نابلس میں دوما کے مقام پر انتہا پسند یہودیوں نے ایک مکان کو آگ لگا دی تھی جس کے نتیجے میں وہاں پر موجود ایک شیرخوار بچہ جل کر شہید اور اس کے والدین اور ایک بھائی شدید زخمی ہوگئے تھے۔

مزید : عالمی منظر