عوام انتخابات میں حصہ لیں یا نہیں، فوج کا کوئی رول نہیں

عوام انتخابات میں حصہ لیں یا نہیں، فوج کا کوئی رول نہیں

  

سری نگر (کے پی آئی) بھارتی فوج نے آئندہ اسمبلی انتخابات کے دوران عسکرےت پسندوں کی جانب سے مداخلت روکنے کیلئے ضروری اقدامات کئے جانے کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ ایسی کسی بھی کوشش کو کامیاب نہیں ہونے دیاجائے گا ۔ ایک خبر رساں ایجنسی سے بات کرتے ہوئے بھارت کی15 وےں کور کے جنرل آفیسر کمانڈنگ لفٹیننٹ جنرل گرمیت سنگھ نے بتایاکہ انہیں اس سے کوئی غرض نہیں کہ لوگ ووٹ دیں یا نہ لیکن اس میں کوئی شک نہیں کہ جنگجو انتخابی عمل میں مداخلت کی کوشش کریں گے تاہم وہ یقین دلاتے ہیں کہ اس سلسلے میں فوج ضروری اقدامات کرے گی ۔انہوںنے کہاکہ ا±س پار سے ہر ممکن کوشش کے ساتھ الیکشن کے دوران دراندازوں کو کشمیر میں داخل ہونے کیلئے بھیجاجائے گا۔فوج آفیسر نے کہاکہ الیکشن کے نکتہ نظر سے آئندہ تین چار مہینے کافی اہم ہیں جس دوران جنگجو اس عمل میں رکاوٹ ڈالنے کی کوشش کریں گے اور وادی میں اپنی تعداد کو بھی بڑھاناچاہیں گے ۔

 سنگھ کے مطابق فوج وادی اور خاص کر دیہی علاقوں میں جنگجوﺅں اور دیگر عناصر کی ان کارروائیوں سے بچنے کیلئے ضروری اقدامات کرے گی ۔ انہوںنے کہاکہ فوج کا کشمیر میں انتخابات کرانے میں کوئی رول نہیں لیکن وہ اس بات کو یقینی بناناچاہتے ہیں کہ اس عمل میں شرکت کرنے کے خواہش مند لوگوںکو ایک اچھا ماحول ملے تاکہ وہ آسانی سے ووٹ ڈال سکیں۔انہوںنے کہاکہ فوج ایک غیر سیاسی ادارہ ہے جس کا جموں کشمیر سمیت ملک کی کسی بھی ریاست میں انتخابات میں براہ راست عمل دخل کاکوئی رول نہیں ۔ حریت نواز لیڈران فوج پر یہ الزام لگاتے رہے ہیں کہ وہ لوگوں کو انتخابات میں بندوق کی نوک پر شرکت کرنے کیلئے مجبور کرتی رہی ہے ۔ سنگھ نے کہاکہ کیرن سیکٹر میں دراندازی جنگجوﺅں کی نئی حکمت عملی ہے جو فوج کو دھوکہ دے کر ایک ساتھ مختلف مقامات سے بڑی تعداد میں وادی میں وارد ہوناچاہتے ہیں ۔ تاہم انہوںنے کہاکہ فوج نے بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے جنگجوﺅں کی دراندازی کی کوشش کو ناکام بنادیا۔انہوںنے کہاکہ ستمبر میں کیرن میں بڑی تعداد میں جنگجوﺅں نے دراندازی کی کوشش کی تھی جبکہ اس سے قبل دو یا تین لوگ ہی درندازی کی کوشش کرتے رہے ہیں ۔فوجی آفیسر نے کہاکہ کیرن آپریشن کے دوران چھ جنگجوﺅں کی ہلاکت اور بھاری مقدار میں اسلحہ کی برآمدگی یہ ظاہر کرتی ہے کہ دراندازی کرنے والا گروپ کافی بڑا تھا۔انہوںنے بتایاکہ امسال حد متارکہ پرمختلف آپریشن کے دوران فوج نے 40سے زائد جنگجوﺅں کو مارنے میں کامیابی حاصل کی ہے ۔

مزید :

عالمی منظر -