دوممالک کے درمیان تاریخی معاہدے کے موقع پر فوٹوگرافروں نے تصاویر لینے کی بجائے کیمرے ہی زمین پر رکھ دیئے کیونکہ ۔۔ ۔

دوممالک کے درمیان تاریخی معاہدے کے موقع پر فوٹوگرافروں نے تصاویر لینے کی ...
دوممالک کے درمیان تاریخی معاہدے کے موقع پر فوٹوگرافروں نے تصاویر لینے کی بجائے کیمرے ہی زمین پر رکھ دیئے کیونکہ ۔۔ ۔

  


سیول(مانیٹرنگ ڈیسک) عمومی طورپر ممالک کے درمیان ہونیوالے معاہدے میڈیا کی توجہ کا مرکز ہوتے ہیں لیکن جاپان اور جنوبی کوریا کے ددرمیان ہونیوالے معاہدے پر دستخط کی تقریب کے موقع پر صحافیوں نے تصاویر لینے کی بجائے اپنے کیمرے قطاروں میں زمین پر رکھ دیئے ، یہ اقدام فوٹوگرافروں نے احتجاج کے طورپر اٹھایا۔

العربیہ نے فوٹوگرافی اور کیمرے سے متعلق خبروں کی ویب سائٹ petapixel کے حوالے سے بتایاکہ جاپان اور جنوبی کوریا کے درمیان گزشتہ ہفتے عسکری انٹیلی جنس سے متعلق معلومات کے تبادلے کے معاہدے پر دستخط کیے گئے اور اس موقع پر جنوبی کوریا کے حکام نے فیصلہ کیا کہ دستخط کی تقریب میں فوٹو گرافروں کا داخلہ ممنوع ہوگا۔

فوٹو گرافروں نے مذکورہ فیصلے اور خود کو نظرانداز کیے جانے کے خلاف احتجاج کا انوکھا طریقہ اختیار کیا۔ 23 نومبر کو معاہدے پر دستخط کی تقریب میں شرکت کے لیے سیول میں جاپانی سفیر Yasumasa Nagamine جنوبی کوریا کی وزارت دفاع کی عمارت میں داخل ہوئے تو وہاں موجود جنوبی کوریا کے تمام فوٹو گرافروں نے اپنے کیمرے احتجاجا زمین پر رکھ دیے۔

دوسری جانب جنوبی کوریا کی وزارت دفاع نے معاہدے پر دستخط کی تقریب سے متعلق اپنی خصوصی تصاویر جاری کردیں اور فوٹوگرافروں کے احتجاج کو کسی خاطر میں نہ لایا گیا۔

مزید : بین الاقوامی


loading...