پولیس اہلکاروں پر تشدد ‘ 24 افراد گرفتار ‘ آج عدالت پیشی ‘ ورثاء کا مظاہرہ ‘ دھرنا

پولیس اہلکاروں پر تشدد ‘ 24 افراد گرفتار ‘ آج عدالت پیشی ‘ ورثاء کا مظاہرہ ‘ ...

ڈیرہ غازی خان (سٹی رپورٹر) تھانہ دراہمہ کے پولیس اہلکاروں کو یرغمال بنانے اور تشدد کر نے والے 24نامزد اور 12نامعلوم افراد کے خلاف تھانہ دراہمہ میں مقدمہ درج 24گرفتار ملزمان کو آج عدالت پیش کیا جا ئے گا گرفتار ملزمان کے رشتہ داروں کا آر پی او آفس کے سامنے احتجاجی مظاہرہ (بقیہ 30نمبرصفحہ7پر )

کیا گیا ۔تفصیلات کے مطابق تھانہ دراہمہ پولیس کے کانسٹیبل سجاد اکبر کے مطابق میں اور محمد عمران کانسٹیبل سب انسپکٹر راناجاوید اخترکی ہدایت پر مقدمہ نمبر 413/18کے ملزمان کو تفتیش کے سلسلہ میں اطلاع یابی کے لئے سمینہ کی بستی کلال والا پہنچے تو ملزمان حاجی عابد ،محمد حفیظ ،محمد فاروق ،محمد صدیق ،محبوب وغیرہ نے حکمنامہ کی تعمیل کے بجائے ہمارے ساتھ توں تکرار شروع کر دی اور دونوں کو پکڑ کر بستی میں گھسیٹنا شروع کر دیا اور محمد رمضان کے گھر لے گئے جہاں دیگر درجنوں افراد کو بھی اکٹھا کر کے تشدد کیا اور ہمارے شناختی کارڈ ،نقدی ،موبائل فون بھی چھین لئے اور ہمیں زبردستی وردیوں کے اوپر کپڑے پہنا کر ویڈیو بنائی اور گردنیں کاٹ کر دریا میں بہانے کی باتیں کرتے رہے جاوید نامی شخص گھر سے پسٹل لے کر آیا اور ہوائی فائرنگ بھی کی ملزمان نے ہمیں کپڑے پہنانے کے بعد 15پر گھر میں ڈاکوؤں کے گھسنے کی اطلاع بھی کر دی جس کے بعد مقامی پولیس موقع پر پہنچی اور ہمیں بازیاب کرایا پولیس تھانہ دراہمہ نے دونوں محبوس بنائے جا نے والے اہلکاروں کی بازیابی کے بعد سجاد اکبر کانسٹیبل کے بیان پر مقدمہ نمبر 460/18زیر دفعہ 148/149،353،506، 186،342،379ت پ درج کر کے 24افراد کو گرفتار کر لیا جنہیں آج عدالت میں پیش کیا جا ئے گا گزشتہ شب ڈی ایس پی صدر سرکل سید رمیض بخاری اور ایس ایچ او تھانہ دراہمہ فاروق آفاق نے سمینہ کی بستی کلال والا میں خود موقع پر پہنچ کر دونوں پولیس اہلکاروں کو بازیاب کرایا تھا دریں اثناء گرفتار 24افراد کے رشتہ داروں نے دراہمہ پولیس کی کاروائی کے خلاف ریجنل پولیس آفیسر کے دفتر کے باہر رات گئے احتجاج کیا جس پر تھانہ سول لائن پولیس نے مظاہرین کو انصاف کی فراہمی کی یقین دہانی کراکر منتشر کر دیا مظاہرین نے پولیس کے خلاف نعرے بازی کی اور دھرنا دیا ۔

دھرنا

مزید : ملتان صفحہ آخر