چارسدہ بیسک کمیونٹی سکول کے اساتذہ تنخواہوں کی عدم فراہمی اور مستقل نہ کرنے پر سراپا احتجاج

چارسدہ بیسک کمیونٹی سکول کے اساتذہ تنخواہوں کی عدم فراہمی اور مستقل نہ کرنے ...

چارسدہ (بیورورپورٹ) بیسک کمیونٹی سکول کے اساتذہ تنخواہوں کی عدم فراہمی اور مستقل نہ کرنے پر سراپا احتجاج۔ دس ماہ کے تنخواہوں کی عدم فراہمی پر3 دسمبر کو اسلام آباد میں دھرنا دیا جائے گا، مطالبات پوری نہ ہونے کے بعد سکولوں کو بند کیا جائے گا۔تفصیلات کے مطابق بیسک کمیونٹی سکول کے اساتذہ تنظیم کے مرکزی جائنٹ سکرٹری نوراحمد نے احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پورے پاکستان میں تقریباً بیس ہزار اساتذہ جن میں سات ہزار فی میل سٹاف بھی ہے اپنی فرائض سرانجام دے رہے ہیں اور انہی سکولوں میں لاکھوں بچے زیرتعلیم ہیں، اساتذہ کے مطابق دس ماہ سے انہیں تنخواہیں نہیں دی جارہی جس سے انکے گھروں کا چولھا ٹھنڈا پڑچکا ہے اور اس سلسلے میں وہ آج اسلام آباد میں دھرنا دینگے، انہوں نے کہا کہ اگر انکے مطالبات نہیں مانے گئے تو سکولوں کو تالے لگادیں گے۔ نوراحمد نے مزید کہا کہ تنخواہوں کی عدم فراہمی کے سلسلے میں کئی سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر اور وفاقی وزیر مذہبی امور نورالحق قادری سے بھی مل چکے ہیں جنہوں نے مطالبات تسلیم کرنے کی یقین دہانی بھی کرائی تھی مگر اب تک کوئی شنوائی نہیں ہوئی۔یاد رہے کہ عمران نے گزشتہ دورحکومت میں اپنے دھرنوں کے دوران بیسک کمیونٹی سکول کے اساتذہ سے وعدے کئے تھے اور کہا تھا کہ اگر انکی حکومت آئی تو انکے مطالبات ترجیحی بنیادوں پر مان لئے جائیں گے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر