جنوبی پنجاب صوبے کی ہر پلیٹ فارم پر حمایت کریں گے : خورشید شاہ

جنوبی پنجاب صوبے کی ہر پلیٹ فارم پر حمایت کریں گے : خورشید شاہ

  

سکھر(بیورو رپورٹ )پاکستان پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما اورسابق قائد حزب اختلاف سیدخورشیداحمد شاہ نے کہا ہے کہ تحریک انصاف جنوبی پنجاب کو صوبہ نہیں بنائے گئی، انھوں نے لوگوں گمراہ کیا اگر وہ جنوبی پنجاب صوبہ بنانا چاہتے ہیں تو ہم ہر پلیٹ فارم پران کا ساتھ دیں گے،اٹھارویں ترمیم کے خلاف مختلف قوتیں متحرک ہیں، وہ چاہتی ہیں کہ ترمیم کو ختم کرکے صوبائی خود مختیاری ختم کی جائے۔پہلے بھی کئی بار ون یونٹ اور ون مین شو کے تجربے ہوگئے ہیں جو ہمیشہ ناکام ہوئے، وہی ملک کامیاب ہوتا ہے، جس کی فیڈریشن مضبوط ہو لیکن ادھر فیڈریشن کو کمزور کیا جارہا ہے،مجھے جسٹس جاوید اقبال کو بطور چیئرمین نیب تعینات کرنے پر افسوس نہیں ہے کیونکہ فرعون کے گھر میں ہی موسی پیدا ہوا تھا ۔سکھرمیں میڈیا سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ 2008میں پہلی بار فیڈریشن کو پیپلزپارٹی نے مضبوط کیا، رضا ربانی اٹھارویں ترمیم کا مسودہ لے کرآئے اور آصف زرداری کو یہ کریڈٹ جاتاہے کہ انہوں نے صوبوں کو خود مختیار بنایا۔انہوں نے کہا کہ ہمارا وزیراعظم کہتا ہے کہ جو سیاستدان یوٹرن نہیں لیتا وہ لیڈر نہیں بن سکتا، پیپلزپارٹی کی قیادت نے لوگوں کو سوچ اور نظریہ دیا، بے نظیر صاحبہ کو دھمکیاں دی گئیں کہ آپ پاکستان نہ جائیں، آپ کو مار دیا جائے گا، بے نظیر صاحبہ یوٹرن لے سکتی تھیں لیکن آپ نے کہا مجھے پروا نہیں مجھے بس اپنی عوام میں رہنا ہے۔خورشید شاہ نے بتایا کہ لیاقت باغ جلسے سے پہلے بھی پشاور میں بتایا گیا کہ آپ راول پنڈی جلسہ نہ کریں لیکن محترمہ نے کہاکہ مجھے اپنی عوام میں جانے سے کوئی روک نہیں سکتا۔انہوں نے کہا کہ ذوالفقار علی بھٹو بھی ضیاء الحق کے سامنے سر جھکا کر یوٹرن لے سکتے تھے لیکن ان لوگوں نے اپنی جانیں دیکر لوگوں کی سوچیں مضبوط کیں۔سید خورشیدشاہ نیکہا کہ عمران خان کو پتہ نہیں کدھر کیا بات کرنی ہے، دنیا کدھر سے کدھر پہنچ گئی ہے لیکن عمران مرغیوں اور انڈوں کی باتیں کررہے ہیں۔ چین نے اپنی عوام کے ساتھ مضبوط تعلق قائم رکھ کر دنیا میں انقلاب برپا کردیا انھوں نے اپنی عوام کو انڈے ، مرغیاں اور کٹے نہیں بلکہ سوچ دی ہے۔خورشید شاہ نے کہاکہ ہم جمہوری لوگ ہیں، جمہوریت کے تسلسل پر یقین رکھتے ہیں اور اس کیلئے ہر ممکن کوشش بھی کرتے ہیں، ہم یوٹرن نہیں لیتے ۔ ہم نے پی ٹی آئی کے استعفوں کے معاملے پر تحریک انصاف کا ساتھ دیا، اسپیکر سے درخواست کی تحریک انصاف کے ارکان اسمبلی کے خلاف کارروائی نہ کریں کیونکہ وہ دوبارہ اسمبلی میں آچکے ہیں، کوئی بھی ہمارے نظریئے کے خلاف ہوگیا ہم ان کا ساتھ نہیں دیں گے ۔خورشید شاہ نے کہاکہ کوئی کسی امر کا احتساب کیوں نہیں کرتا، ان کے بھی بیرونی ممالک میں جائیدادیں ہیں۔ نیب کے چیئرمین کی تعیناتی کے معاملے پر انہوں نے کہاکہ مجھے جسٹس جاوید اقبال کو بطور چیئرمین نیب تعینات کرنے پر افسوس نہیں ہے کیونکہ فرعون کے گھر میں ہی موسی پیدا ہوا تھا۔ احتساب سب کا ہونا چاہیے ۔ اگر کسی پر الزام لگائے جاتے ہیں تو نیب کو چاہیے کہ اسکے ثبوت بھی دیں۔تحریک انصاف کے سندھ کے رہنما رمیش کمار کے الزامات پرانہوں نے کہاکہ مجھے خوشی ہوگی کہ چیف جسٹس آف پاکستان مجھے سپریم کورٹ بلائیں اور الزامات کی تحقیق بھی کریں اگر الزامات درست ثابت ہوجائیں کہ میں نے لوگوں کی زمینوں پر قبضہ کیا ہے تو میں سیاست چھوڑ دوں گا ، اگر ایسا کچھ ثابت نہ ہوا تو رمیش کمار کو خلاف آرٹیکل 62/63 کے تحت نااہل کریں۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -