شین پانگ یونیورسٹی کے وفد کی جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کا دورہ

شین پانگ یونیورسٹی کے وفد کی جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کا دورہ

  

صوابی (محمد شعیب سے)شین یانگ ائیرو سپیس یونیورسٹی چائنہ کے تین رکنی وفد نے غلام اسحاق خان انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ سائنسز اینڈ ٹیکنا لوجی ٹوپی ضلع صوابی کے دورے کے موقع پر آئندہ اکیڈمکس سال سے جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کے دس طلبا و طالبات کو دس سکالر شپ دینے کی پیشکش کر تے ہوئے کہا کہ طلبا ء کو دیئے جانے والے سکالر شپ میں ان کی ایڈ مشن ، ٹیوشن فیس، رہائش اور ٹریول چارجز بھی شامل ہونگے۔ شین یانگ ایئرو سپیس یونیورسٹی چائنہ کے مسٹر رچرڈ چن (Richard Chen) سیکرٹری جنرل آف لیاوننگ پرونشل ایجو کیشن فار انٹر نیشنل ایکسچینج ، مسٹر پن کیبو(PAN QIBO) اور کنگ ٹونگ ٹاؤ (KING TONG TAO) نے اتوار کے روز غلام اسحاق خان انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی کا خصوصی دورہ کیا اس موقع پر چائنہ وفد کے ارکان نے ریکٹر جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ انجینئر جہانگیر بشر ، پرو ریکٹر اکیڈمکس پروفیسر ڈاکٹر جمیل النبی ، پروفیسر ایڈمنسٹریشن اینڈ فنانس ڈینز حسن بصیر شیخ اور ہیڈ آف ڈیپارٹمنٹ کے حکام سے ملاقات کی۔اور ریکٹر انجینئر جہانگیر بشر سے باہمی تعاون اور تحقیق پر تبادلہ خیال کیا ریکٹر انجینئر جہانگیر بشر نے وفد کو بتایا کہ ماہ اگست میں انہوں اور ساپرسٹ کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر شکیل درانی نے شین یانگ ایئرو سپیس یونیورسٹی چائنہ سے مشترکہ تحقیق طلباء و طالبات ، فیکلٹیز کے تبادلے اور دوسرے اکیڈمکس کی مصروفیات سے متعلق ایم او یو دستخط کیا تھا۔چائنہ یونیورسٹی کے پروفیسر مسٹر رچرڈ چن نے شین یانگ ائیرو سپیس یونیورسٹی چائنہ سے متعلق جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کے حکام کو بریفنگ دیتے ہوئے واضح کر دیا کہ چائنہ کی مذکورہ یونیورسٹی فائٹر (جنگی)جہازوں کو بنانے میں کیا کر دار ادا کر تی ہے۔انہوں نے جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ میں طلباء کو جدید سہولیات کی فراہمی کو سراہتے ہوئے کہا کہ چائنہ یونیورسٹی اور جی آئی کے یونیورسٹی دونوں کے باہمی تعاون کو مزید مستحکم اور بڑھایا جائیگا ۔ ا س موقع پر چائنہ وفد کو فیکلٹی آف میٹریلز سائنس اور کیمیکل انجینئر نگ کے ڈینز پروفیسر ڈاکٹر اشرف علی اور ہیڈ آف کیمیکل انجینئرنگ ڈیپارٹمنٹ پروفیسر ڈاکٹر جاوید ربانی ، فیکلٹی آف انجینئرنگ کے ڈین پروفیسر ڈاکٹر ایس ایم احمد نے جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ میں جاری نصابی اور غیر نصابی سر گر میوں سے متعلق تفصیلی بریفنگ میں آگاہ کیا ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -