”پنجاب میں یہ چیز صفر ہے اور کے پی کے میں ۔۔“چیف جسٹس ایسی بات کہہ دی کہ کے پی کے حکومت شرم سے پانی پانی ہو جائے

”پنجاب میں یہ چیز صفر ہے اور کے پی کے میں ۔۔“چیف جسٹس ایسی بات کہہ دی کہ کے پی ...
”پنجاب میں یہ چیز صفر ہے اور کے پی کے میں ۔۔“چیف جسٹس ایسی بات کہہ دی کہ کے پی کے حکومت شرم سے پانی پانی ہو جائے

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ اتنے عرصہ سے کہتے رہے کہ شعبہ صحت میں کمال کردیا، خیبر پختون خوا میں آپ ابھی تک فضلہ تلف کرنے کیلئے بھٹیاں نہیں لگا سکے، پنجاب کے ہسپتالوں میں فضلے کی موجودگی صفر ہے۔

سپریم کورٹ میں خیبر پختون خواہ کے ہسپتالوں کے طبی فضلے کی تلفی سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی جس میں دوران چیف جسٹس نے سیکرٹری صحت سے استفسار کیا کہ آپ نے رپورٹ جمع کروا نی تھی ۔

سیکرٹری صحت خیبر پختون خوا نے جواب دیا کہ 4173 کلوروزطبی فضلہ بنتاہے، 3600 کلوتلف کررہے ہیں ، کے پی کے میں 63 سرکاری اور 158 نجی ہسپتال ہیں۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ اتنے عرصہ سے کہتے رہے کہ شعبہ صحت میں کمال کردیا، آپ ابھی تک فضلہ تلف کرنے کیلئے بھٹیاں نہیں لگا سکے، سرکاری ہویا نجی ہسپتال فضلہ تلف کرناحکومت کامسئلہ ہے، ابھی تک آپ کو بھٹیاں لگانے کے لیے وقت چاہیئے۔ جس پر سیکرٹری ہیلتھ نے کہا کہ ہم آئندہ سال جون تک کام مکمل کرلیں گے۔چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ 2 ماہ بعد رپورٹ پیش کریں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ پنجاب میں طبی فضلہ تلف کرنے کیلئے26 بھٹیاں لگی ہوئی ہیں،پنجاب کے ہسپتالوں میں فضلے کی موجودگی صفر ہے ۔ پشاورکے ذہنی امراض کے سپتال میں لوگوں کی حالت جانوروں کی طرح ہے، لوگوں کووہاں جانوروں کی طرح باندھ کررکھا ہوا ہے،میں خود 3 سے 4 روزمیں اسپتال کا دورہ کروں گا، طبی فضلہ تلف کر نے سے متعلق سماعت 2 ماہ تک ملتوی کر دی گئی ہے ۔

مزید :

قومی -