یہ بات ثابت شدہ ہے حسن اورحسین نوازکے کوئی ذرائع آمدن نہیں تھے،نیب پراسیکیوٹرواثق ملک

یہ بات ثابت شدہ ہے حسن اورحسین نوازکے کوئی ذرائع آمدن نہیں تھے،نیب ...
یہ بات ثابت شدہ ہے حسن اورحسین نوازکے کوئی ذرائع آمدن نہیں تھے،نیب پراسیکیوٹرواثق ملک

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سابق وزیراعظم نوازشریف کیخلاف احتساب عدالت میں العزیزیہ ریفرنس کی سماعت جاری ہے، احتساب عدالت کے جج محمد ارشد ملک ریفرنس کی سماعت کر رہے ہیں۔

نیب پراسیکیوٹر واثق ملک نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ نوازشریف کہتے ہیں میرے بیٹے نے مجھے تحفے کے طورپررقم دی،حسین نوازنے جوپیسے بھیجے اس میں یہ نہیں کہایہ تحفہ ہے،حسین نوازنے پیسے بھیجنے کامقصد سرمایاکاری ظاہرکیا،نیب پراسیکیوٹرکا کہناتھا کہ کچھ رقوم براہ راست ایچ ایم ای کی طرف سے بھجوائی گئیں،حسین نوازنے جورقم بھیجی وہ انھیں ایچ ایم ای کی طرف سے آئی۔

واثق ملک کا کہناتھا کہ یہ بات ثابت شدہ ہے حسن اورحسین نوازکے کوئی ذرائع آمدن نہیں تھے،حسن اورحسین نوازنے کبھی دعویٰ نہیں کیا،کاروبارکیلئے خودسرمائے کاانتظام کیا،نوازشریف بھی یہی کہتے رہے میرے والدنے کاروبارشروع کیا،نیب پراسیکیوٹرنے کہا کہ نوازشریف نے کبھی یہ نہیں کہابچوں نے اپنے کاروبارسے پیسے بھیجے،ناقابل یقین بات ہے 3باروزیراعظم رہنے والاشخص کہے کچھ پتہ نہیں۔

پراسیکیوٹر نیب کا کہناتھا کہ نوازشریف نے سیاست میں آنے کے بعدشیئرزبچوں کے نام منتقل کئے،نوازشریف کاروزمرہ کا خرچ ان کی آمدن سے کہیں زیادہ تھا،العزیزیہ سٹیل ملزکے اصل مالک کوچھپانے کیلئے سازش کی گئی،بے نامی دارخودکواصل مالک کہہ رہے ہیں لیکن ثبوت نہیں دے رہے۔

واثق ملک نے کہا کہ جلاوطنی میں نوازشریف یامیاں شریف کوسعودی شاہی مہمان نہیں کہاگیا،سعودی عرب پہنچتے ہی 4 ماہ میں العزیزیہ مل نے کام شروع کردیا،اتنابڑاسیٹ اپ تھا کوئی دکان نہیں تھی کہ جلدی کام شروع کردے،نیب پراسیکیوٹرنے کہا کہ یہ سارے عناصر وائٹ کالر کرائم میں آتے ہیں،قطری خط کے ساتھ پیش کردہ ورک شیٹ پرشہزادے کے دستخط نہیں۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد