بابری مسجد کیس، فیصلے کیخلاف نظر ثانی درخواست دائر 

      بابری مسجد کیس، فیصلے کیخلاف نظر ثانی درخواست دائر 

  



نئی دہلی(آئی این پی) بھارتی سپریم کورٹ میں جمعیت علمائے ہند کے مولانا اشہد راشدی کی جانب سے بابری مسجد ہندووں کو دینے کے فیصلے کیخلاف نظرثانی کی درخواست جمع کرادی ہے۔بھارتی میڈیا کے مطابق جمیعت علمائے ہند کے رہنما مولانا سید اشہد راشدی نے بابری مسجد تنازع پر پہلے قانونی فریق محمد صدیق کی نمائندگی کرتے ہوئے سپریم کورٹ میں بابری مسجد فیصلے پر 217 صفحات پر مشتمل نظرثانی کی درخواست جمع کرائی ہے۔درخواست میں مولانا راشدی نے موقف اختیار کیا ہے کہ 1992میں بابری مسجد کی شہادت میں ملوث بی جے پی رہنماوں اور دیگر ملزمان کا فیصلہ سنائے بغیر زمین ہندووں کو دے دینا، مسجد پر حملہ کرنے والوں کے عمل کی حمایت کرنا ہوگا جو ان ملزمان کو قانونی جواز فراہم کرنے کے مترادف ہے۔مولانا راشدی نے سپریم کورٹ کی جانب سے سنی وقف بورڈ کو کسی اور جگہ مسجد کی تعمیر کیلئے 5ایکڑ زمین فراہم کرنے کے حکم پر بھی اعتراض اٹھاتے ہوئے کہا کہ سنی وقف بورڈ نہ تو فریق اور نہ ہی وہ مسلمانوں کی نمائندگی کرنے والی کوئی مذہبی جماعت ہے۔مولانا اشہد نے بابری مسجد زمین تنازع کے اصل قانونی فریق محمد صدیق کے وارث کی حیثیت سے استدعا کی کہ سپریم کورٹ بابری مسجد کو شہید کرنے والے ملزمان کیخلاف جلد فیصلہ سنائے، زمین ہندووں کو دینے اور سنی وقف بورڈ کو 5 ایکڑ زمین دینے کے اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرے۔

بابری مسجد کیس 

مزید : صفحہ آخر