اداروں سے جنگ کی پالیسی نہیں لیکن انہیں بھی آئینی حدود میں رہنا چاہئے: فضل الرحمن 

  اداروں سے جنگ کی پالیسی نہیں لیکن انہیں بھی آئینی حدود میں رہنا چاہئے: فضل ...

  



کوئٹہ(آئی این پی) جمعیت علما اسلام  (ف)کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ مقتدر اداروں کو کہتا ہوں میں آئین کو مانتا ہوں آپ بھی مانیں،ہماری اداروں سے جنگ کی کوئی پالیسی نہیں، لیکن ادارے کو بھی آئینی حدود میں رہنا چاہئے،وزرا17 روپے کلو ٹماٹر اور 5 روپے پیازبتاکر عوام کا مذاق اڑا رہے ہیں، یورپی  ممالک سے لوگوں کی نوکریوں کے لیے آنے کی باتیں دم توڑ چکی ہیں۔کوئٹہ میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ ہماری اداروں سے جنگ کی کوئی پالیسی نہیں، لیکن ادارے کو بھی آئینی حدود میں رہنا چاہئے۔جے یو آئی (ف)کے سربراہ نے کہا کہ پرویز مشرف نے مجھے کہا کہ آپ کیوں امریکا کی غلامی نہیں مانتے، میں نے انہیں کہا کہ آپ کے بزرگوں نے غلامی کی اور مجھے میرے بزرگوں نے غلامی کے خلاف لڑنے کا راستہ بتایاہم غلاموں کے سامنے سر نہیں جھکائیں گے۔مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ آزادی مارچ میں ساتھ دینے پر محمود اچکزئی اور پشتونخوا کے کارکنوں کا شکر گزار ہوں، آزادی مارچ نے ملکی سیاسی تاریخ میں ایک روشن باب کا اضافہ کیا ہے اور دنیا کو پیغام دیا کہ پاکستانی عوام سلیکٹڈ حکومت کے خلاف متحد ہیں۔ملک میں حق حاکمیت عوام کی بجائے بیرونی قوتوں کے پاس ہے،ہم اپنے آباو اجداد کی میراث کے امین ہیں ہم امریکا و دیگر قوتوں کی بالادستی تسلیم نہیں کرتے۔

فضل الرحمن 

مزید : صفحہ اول