پاکستان کے انجینئر وقار کی ’ شاندار ناکامی ‘ کے بعد پیش ہے انڈیا کا وقار ، پانی سے چلنے والا انجن بنادیا، ایک لٹر پانی میں 30 لٹر تیل کے برابر انرجی ملنے کا دعویٰ

پاکستان کے انجینئر وقار کی ’ شاندار ناکامی ‘ کے بعد پیش ہے انڈیا کا وقار ، ...
پاکستان کے انجینئر وقار کی ’ شاندار ناکامی ‘ کے بعد پیش ہے انڈیا کا وقار ، پانی سے چلنے والا انجن بنادیا، ایک لٹر پانی میں 30 لٹر تیل کے برابر انرجی ملنے کا دعویٰ

  



حیدر آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان میں انجینئر وقار کے پانی سے چلنے والے انجن کی دریافت کی شاندار ناکامی کے بعد انڈیا میں بھی ایک شخص نے پانی سے چلنے والا انجن بنانے کا دعویٰ کردیا۔

ریاست تلنگانہ کے دارالحکومت حیدر آباد سے تعلق رکھنے والے سندر رامیا نے دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے واٹر فیول ٹیکنالوجی دریافت کی ہے جس کی مدد سے ہر قسم کی گاڑیاں پانی پر چلنے کے قابل ہوجائیں گی۔ سندر کہتے ہیں کہ ان کا انجن چلے گا تو پانی کے باعث اس میں سے آکسیجن خارج ہوگی جس کی وجہ سے گلوبل وارمنگ کا مسئلہ ختم ہوجائے گا اور اس سے گاڑیوں کے انجن بھی دیرپا چلیں گے۔

سندر رامیا نے صرف اسی پر بس نہیں کی بلکہ انہوں نے اس سے بھی بڑھ کر دعوے کر دیے۔ کہتے ہیں کہ ان کے بنائے ہوئے انجن میں ایک لٹر پانی ڈالنے سے 30 لٹر ایندھن کے برابر انرجی ملے گی ، اس وقت 90 کروڑ گاڑیاں چل رہی ہیں، اگر اس ٹیکنالوجی پر ساری گاڑیوں کو شفٹ کردیا گیا تو گاڑیوں سے پھیلنے والی آلودگی صفر ہوجائے گی۔

خیال رہے کہ اس سے قبل پاکستان کے صوبہ سندھ سے تعلق رکھنے والے ایک انجینئر وقار نے بھی اسی قسم کے دعوے کیے تھے، انجینئر وقار نے دعویٰ کیا تھا کہ انہوں نے پانی سے چلنے والا انجن ایجاد کیا ہے ، شروع میں تو ان کی اس ایجاد پر بہت واہ واہ ہوئی لیکن پھر یہ ایک فراڈ ثابت ہوا تھا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /سائنس اور ٹیکنالوجی