نرس نے جگر کا ٹکڑا عطیہ کرکے بچے کی جان بچالی

نرس نے جگر کا ٹکڑا عطیہ کرکے بچے کی جان بچالی
نرس نے جگر کا ٹکڑا عطیہ کرکے بچے کی جان بچالی
سورس: فوٹو بشکریہ الاخباریہ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

ریاض (ڈیلی پاکستان آن لائن) سعودی عرب میں القطیف سینٹرل ہسپتال کی سعودی نرس زھرا الزوری نے اپنے جگر کا ایک حصہ عطیہ کرکے بچے کی جان بچا لی۔ 
سعودی میڈیا سے گفتگو  میں نرس نے اپنے اس متاثر کن تجربے کے بارے میں بتایا اور احساسات شیئر کیے۔ زھرا الزوری کا کہنا ہے وہ اس بات پر یقین رکھتی ہیں کہ اعضا کا عطیہ کم عمری میں ہی کرنا چاہیے۔انسان کو اس جیسے کارخیر کے لیے بوڑھے ہونے کا انتظار نہیں کرنا چاہیے۔ بعض لوگ اعضا کےعطیے کا معاملہ بڑھاپے یا موت کے بعد کے لیے چھوڑ دیتے ہیں ایسی صورت میں بسا اوقات اعضا کا عطیہ بے معنی ہو جاتا ہے۔ اعضا بڑی حد تک غیر موثر ہو جاتے ہیں۔
زھرا الزوری نے مزید بتایا کہ نو سالہ بچے علی کی جان بچانے کے لیے جگر عطیہ کرنے کا فیصلہ شروع میں مشکل لگا تاہم عطیہ کرنے کا فیصلہ مکمل احساس کے ساتھ کیا۔بچے کی جان بچانے کے لیے جگر کا ایک حصہ عطیہ کرنے کے سلسلے میں کسی سے مشاورت کی ضرورت نہیں تھی۔ 
سعودی نرس کا کہنا ہے کہ ہمارے معاشرے میں ابھی اعضا عطیہ  کرنے کا رواج عام نہیں۔ ہسپتال میں کام کے دوران جو کچھ دیکھتی اور سنتی ہوں وہ اعضا عطیہ کرنے کا ایک بڑا محرک بنا۔ اعضا عطیہ کیے جانے کے بعد صحت کی یقین دہانی پر کمیونٹی بھی اس طریقہ کار کو قبول کر رہی ہے۔
انہوں نے بتایا جگر کے عطیے پر بچے کے گھر والوں نے اس کے نام شکریہ اور ممنونیت کا خط بھیجا ہے۔