حاجیوں کو سبسڈی نہ دینے کا فیصلہ مایوس کن ہے،شاہ اویس نورانی

حاجیوں کو سبسڈی نہ دینے کا فیصلہ مایوس کن ہے،شاہ اویس نورانی

لاہور( نمائندہ خصوصی )جمعیت علماء پاکستان کے مرکزی سیکریٹری جنرل صاحبزادہ شاہ محمد اویس نورانی نے کہا ہے کہ حج کو مہنگا کرنا اسلام دشمن فیصلہ ہے۔ حکومت حج اخراجات میں کمی کی سبیل نکالے۔ حاجیوں کو سبسڈی نہ دینے کا فیصلہ مایوس کن ہے۔ مدینہ کی ریاست کا مطلب عوام کو تکلیف نہیں ریلیف دینا ہے۔ مسئلہ افغانستان پر جاری مذاکرات کی کامیابی کے لئے بھارت اور کابل کی سازشوں سے ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے۔ امریکہ افغانستان میں بری طرح ناکام ہو چکا ہے۔ سانحہ ساہیوال کی تحقیقات کے لئے جوڈیشل کمیشن بنایا جائے۔ پنجاب کو بنی گالا سے چلایا جا رہا ہے۔ عثمان بزدار نااہل ترین اور کمزور ترین وزیراعلی ہے۔ ملک کے سب سے بڑے صوبے کو ناتجربہ کار شخص کے سپرد کر دینا اہل پنجاب کے ساتھ ظلم ہے۔

۔ پی ٹی آئی کا سیاسی مستقبل روشن نظر نہیں آتا۔ پانچ ماہ میں دوسرا منی بجٹ پیش کرنا حکومت کی نااہلی ہے۔ موجودہ حکومت قادیانیت اور یہودیت کے لئے نرم گوشہ رکھتی ہے۔ غیر ملکی آقاؤں کو خوش کرنے کے لئے آسیہ مسیح کو رہا کیا گیا ہے۔ اپوزیشن عوامی مسائل پر خاموش نہیں رہے گی۔ شیخ رشید کی شمولیت سے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں فساد پھیلے گا۔ طبی بنیادوں پر نواز شریف کو ضمانت پر رہا کیا جائے۔ احتساب کو انتقام بنانے والی حکومت سیاسی انتشار پیدا کر رہی ہے۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے جے یو پی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ صاحبزادہ شاہ محمد اویس نورانی نے مزید کہا کہ پانچ ماہ میں ہی حکومت کی رخصتی کی باتیں شروع ہو گئی ہیں۔ خدشہ ہے کہ پی ٹی آئی کی حکومت اپنے ساتھ جمہوریت کو بھی لے ڈوبے گی۔ دینی طبقات کا اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے۔ نظریاتی قوتوں کے اتحاد کے بغیر پاکستان کے اسلامی تشخص کا تحفظ ممکن نہیں۔ عمران خان سے وابستہ عوامی توقعات مایوسی میں بدل چکی ہیں۔ پی ٹی آئی کی حکومت نے وی آئی پی کلچر ختم کرنے کا وعدہ پورا نہیں کیا۔ وزراء کو بدزبانی کے سوا کوئی کام نہیں آتا۔ گالی گلوچ کی سیاست پی ٹی آئی کا طرہ امتیاز ہے۔ الزام اور انتقام کی سیاست نے ملک کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...