قدرتی آبگاہوں کی حفاظت کا شعور بیدار کرنا ہو گا،لیفٹیننٹ (ر) سہیل اشرف

قدرتی آبگاہوں کی حفاظت کا شعور بیدار کرنا ہو گا،لیفٹیننٹ (ر) سہیل اشرف

لاہور( لیڈی رپورٹر)ڈائریکٹر جنرل وائلڈ لائف اینڈ پارکس پنجاب لیفٹیننٹ (ر) سہیل اشرف نے کہا ہے کہ قدرتی آبگاہوں کے علاقوں کی آبادی میں ان آبگاہوں کی حفاظت اور اہمیت کا شعور اجاگر کرنا اولین ترجیح ہے ۔ تاہم حکومت اوردیگرکنزرویشن ایجنسیوں کے ساتھ ساتھ ان علاقوں کے لوگوں کو بھی چاہیے کہ وہ قدرتی آبگاہوں کے تحفظ میں ان کا ہاتھ بٹانے میں اپنا قومی کردارادا کریں۔ انہوں نے یہ بات ایک مقامی ہوٹل میں گرین پاکستان پروگرام کے تحت ویٹ لینڈز کے عالمی دن کے موقع پر"کلائیمیٹ چینج اینڈ مینجمنٹ آف ویٹ لینڈز " کے موضوع پر ایک روزہ ورکشاپ سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اس موقع پر ڈپٹی ڈائریکٹر وائلڈلائف ہیڈ کوارٹرز محمد نعیم بھٹی، ڈپٹی ڈائریکٹر لاہور ریجن سید ظفرالحسن، ڈپٹی ڈائریکٹرسفاری زو چوہدری شفقت علی، ڈپٹی ڈائریکٹر وائلڈلائف پبلسٹی عامر مسعود اور ڈائریکٹر لاہور چڑیا گھر حسن علی سکھیرا بھی موجود تھے۔

، پراجیکٹ ڈائریکٹر گرین پاکستان پروگرام میاں حفیظ احمد کے علاوہ صوبہ بھر سے آئے ہوئے ریجنل افسران ، یونیورسٹیوں کے ذوالوجی و باٹنی کے ہیڈ آف ڈیپارٹمنٹ اور طلباء و طالبات کی بڑی تعداد موجود تھی۔ ڈی جی وائلڈ لائف نے کہا کہ ویٹ لینڈز مینجمنٹ کا عالمی دن منانے کابنیادی مقصدلوگوں میں آگاہی پیداکرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ویٹ لینڈز کی حفاظت اور آلودگی سے پاک ماحول فراہم کر کے ہی مطلوبہ نتائج کا حصول ممکن ہے۔ گزشتہ صدی کے دوران ریکارڈ شدہ موسمیاتی اثرات کی نسبت موجودہ کرہ ارض کا موسم تبدیل ہورہا ہے درجہ حرارت بڑھ رہا ہے سمندر گرم ہورہے ہیں برف پگھل رہی ہے اور سمندروں میں پانی کی سطح تیزی سے ابھر رہی ہیں اورمحض 35سالوں میں دنیا بھر میں آفات کاحجم دوگنا ہو چکا ہے جن میں 90فیصد آفات پانی اور انتہائی موسمی شدت و حدت کی بناپر آئیں۔ لیفٹیننٹ (ر) سہیل اشرف نے اپنے خطاب میں مزید کہا کہ پاکستان کو خوبصورت ویٹ لینڈز کا حامل ملک ہونے کی بدولت خصوصی اہمیت حاصل ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ویٹ لینڈز گرین ہاؤس گیسز کے اخراج اور موسمی تغیرپر اس کے اثرات کو زائل کرنے، سیلابوں کو روکنے ، قحط سالی سے محفوظ کرنے میں انتہائی اہم کردار ادا کرتی ہیں۔محکمہ تحفظ جنگلی حیات و پارکس پنجاب گزشتہ 2سالوں سے گرین پاکستان پروگرام کے تحت جنگلی حیات اور ایکو سسٹم کی بقاء کے سلسلہ میں صوبہ بھر میں تعینات اپنے سٹاف کی استعداد کار بڑھانے کیلئے متعدد قابل تحسین اقدامات لے چکاہے اور آج کے یہ ورکشاپ انہی کاوشوں کی ایک کڑی ہے ۔ انہوں نے پراجیکٹ ڈائریکٹر گرین پاکستان پروگرام میاں حفیظ احمد اور ان کی تمام ٹیم کو اس ورکشاپ کے کامیاب انعقاد پر مبارکباد دیتے ہو ئے اس امید کا اظہار کیا کہ اس ورکشاپ کے انعقاد سے پنجاب کی ویٹ لینڈز کی بہتر مینجمنٹ کے حوالے سے ٹھوس تجاویز سامنے آئیں گی۔ پراجیکٹ ڈائریکٹر میاں حفیظ احمد نے گرین پاکستان پروگرام کے تحت جنگلی حیات کی ترقی ، بحالی اور بہتری کے لئے اب تک منعقد کی جانے والی ورکشاپس، سیمینارز اور ٹریننگ پروگرام کے ذریعے کیئے جانے والی اقدامات اور عوام آگہی کے منصوبوں پر تفصیلی روشنی ڈالی جبکہ سینئر ایڈوائزر پاکستان لیپرڈ ز فاؤنڈیشن عاشق احمد خان، چےئر مین باٹنی ڈیپارٹمنٹ لاہور کالج فار ویمن یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر فرح خان، ڈائریکٹر کلائیمیٹ انرجی اینڈ واٹرڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان ڈاکٹر مسعود ارشد، اسسٹنٹ پروفیسر وائلڈ لائف مینجمنٹ، ایرڈ ایگریکلچر یونیورسٹی راولپنڈی ڈاکٹر محمد رئیس اور دیگر مہمانوں نے موضوع پر روشنی ڈالی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...