صوبائی وزیر قانون کے زیر صدارت جی ایس پی پلس کے حوالے سے اجلاس

صوبائی وزیر قانون کے زیر صدارت جی ایس پی پلس کے حوالے سے اجلاس

پشاور( سٹاف رپورٹر)خیبر پختونخوا کے وزیر قانون سلطان محمد خان نے اٹارنی جنرل آف پاکستان انور منصور خان کے ہمراہ جی ایس پی پلس کے حوالے سے ہفتے کے روز سول سیکرٹریٹ پشاورمیں ایک اجلاس کی صدارت کی ۔ اجلاس میں اٹارنی جنرل آف پاکستان کو خیبر پختونخوا کی جی ایس پی پلس کے ترجیحی اقدامات پر عمل کے بارے میں تفصیل سے بریفنگ دی گئی ۔ خیبرپختونخوا کے مختلف صوبائی محکموں نے اس سلسلے میں اپنی کارکردگی کے حوالے رپورٹس پیش کئے ۔ مذکورہ دس اقدامات کو یورپی کمیشن نے 18تا25اکتوبر2019ء کو اپنے دورہ پاکستان کے دوران سفارش پیش کی تھی ۔ اٹارنی جنرل آف پاکستان نے خیبر پختونخوا کے مختلف محکموں کی طرف سے اٹھائے گئے اقدامات پر اطمینان کا اظہار کیا اور اس سلسلے میں صوبائی حکومت کی کارکردگی کو سراہا ۔ اجلاس میں چیف سیکرٹری خیبرپختونخوا نوید کامران بلوچ ، ایڈیشنل چیف سیکرٹری ، سیکرٹری قانون ، سیکرٹری محکمہ داخلہ ، سوشل ویلفیئر اور دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی ۔ محکمہ قانون کے معاہد ہ نفاذ سل کے نمائندہ نے اٹارنی جنرل آف پاکستان کو مختلف صوبائی محکموں کی رپورٹ کی روشنی میں جی ایس پی پلس کے حوالے سے اب تک اٹھائے گئے اقدامات سے تفصیلی آگاہ کیا ۔ مختلف صوبائی محکموں نے وفاقی کامرس ڈویژن کے طرز پر اپنے رپورٹس پیش کئے ۔ محکمہ پولیس نے اجلاس کو 2000تا 2018کے دوران صحافیوں اور میڈیا کے کارکنوں کے قتل ، اغواء اور 2009سے 2018ء کے دوران لاپتہ افراد کے حوالے سے تفصیل سے آگاہ کیا ۔ اس طرح محکمہ سوشل ویلفیئر ، محکمہ محنت و افرادی قوت کے اٹھائے گئے اقدامات کا بھی تفصیلی جائزہ لیا گیا ۔ واضح رہے کہ جی ایس پی پلس کے تین بنیادی مقاصد میں غربت کا خاتمہ ، ترقی اور اچھی طرز حکمران شامل ہے ۔ یورپی کمیشن نے اپنے دس نکاتی اقدامات اور موجودہ جی ایس پی پلس ریگولیشن کا وسط مدتی جائزہ لیا

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...