وزیر اعلیٰ محمود خان کی دا سو ڈیم کے مسئال حل کرنے کیلئے مکمل تعاون کی یقین دہانی

وزیر اعلیٰ محمود خان کی دا سو ڈیم کے مسئال حل کرنے کیلئے مکمل تعاون کی یقین ...

پشاور(سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان اور وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واؤڈا کی زیر صدارت اسلام آباد میں داسو ڈیم ہائیڈرو پاور پراجیکٹ پر سٹیرنگ کمیٹی کا بارہواں اجلاس منعقد ہوا۔ وزیراعلیٰ کے مشیر برائے توانائی حمایت اﷲ خان اور سیکرٹری توانائی محمد سلیم نے بھی اجلاس میں شرکت کی ۔ اجلاس میں داسو ہائیڈرو پاور پراجیکٹ کیلئے زمین کے حصول اور دیگر مسائل پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس کے علاوہ سٹیئرنگ کمیٹی کے سابقہ اجلاس کے بعد ہونے والی پیشرفت کا بھی جائزہ لیا گیا۔ سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو خیبرپختونخوا نے اجلاس کو مسئلے کی نوعیت سے متعلق بریف کیا۔ وزیراعلیٰ نے داسو ہائیڈرو پراجیکٹ کی ضرورت و اہمیت پر وشنی ڈالتے ہوئے اس منصوبے کی تیز رفتار تکمیل کی ضرورت پر زور دیا اور یقین دلایا کہ صوبائی حکومت منصوبے کیلئے زمین کے حصول اور دیگر متعلقہ مسائل کے حل کیلئے ہر ممکن تعاون اور سہولت فراہم کرے گی ۔ اس منصوبے کی جلد تکمیل ہماری ترجیح اور ضرورت ہے ۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ کمشنر ہزارہ ڈویژن کی سربراہی میں کمیٹی متاثرین سے مشاورت کے بعد 10 فروری2019 ء تک رپورٹ پیش کرے گی ۔ رپورٹ کی وصولی کے بعد سٹیئر نگ کمیٹی کا دوبارہ اجلاس طلب کیا جائے گا۔ دریں اثناء وزیراعلیٰ نے رشکئی اسپیشل اکنامک زون اور سی آر بی سی ماڈل کے حوالے سے وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں منعقدہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے رشکئی اسپیشل اکنامک زون کی جلد ازجلد تکمیل کیلئے قانونی سفارشات اور تجاویز مرتب کرنے کی ہدایت کی ہے ۔انہوں نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ اس مقصد کیلئے صوبائی وزیر خزانہ کے ساتھ خصوصی اجلاس منعقد کرکے ایک جامع پالیسی ترتیب دی جائے اور آئندہ کیبنٹ میٹنگ میں فیصلہ سازی کیلئے پیش کرے ۔انہوں نے کہاکہ چینی صنعتکار کمپنیوں کو ہر ممکنہ سہولت فراہم کی جائے گی ۔ وزیراعلیٰ کے مشیر برائے صنعت و تجارت عبد الکریم ، سٹرٹیجک سپورٹ یونٹ کے سربراہ صاحبزادہ سعید، انتظامی سیکرٹریوں، چیف ایگزیکٹیو کے پی ازمک اور دیگر متعلقہ حکام نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ رشکئی اسپیشل اکنامک زون کے قیام سے صوبے کی معیشت میں اضافہ ہو گااور روزگار کے وسیع مواقع میسر آئیں گے۔ وزیراعلیٰ نے ہدایات جاری کیں کہ متعلقہ ادارے مل بیٹھ کر انڈسٹریل زون کی کامیابی میں اپنا کردار اداکریں اور اس مد میں تمام صنعتکار کمپنیوں کو سہولت فراہم کی جائے۔ وزیراعلی نے ہدایات جاری کیں کہ اکنامک زون کے قیام کیلئے تمام تر قانونی مشاورت اور سفارشات کو مدنظر رکھ کر لائحہ عمل ترتیب دیا جائے جسے وزیرخزانہ کی مشاورت سے آئندہ کیبنٹ میٹنگ میں فیصلہ سازی کیلئے پیش کیا جائے گا۔انہوں نے کہاکہ صوبائی حکومت صوبے کی معیشت کو خود کفیل بنانے کیلئے ہر ممکن قدم اُٹھائے گی ۔ دیگر اضلاع میں بھی انڈسٹریل زونز کے قیام کے عمل کو تیز تر کیا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ صوبے میں صنعتکار کمپنیوں کی تمام مشکلات کے حل کیلئے صوبائی حکومت تمام تر اقدامات اُٹھائے گی ۔ ا ن کمپنیوں کیلئے رشکئی اسپیشل اکنامک زون اور دیگر انڈسٹریل زون تک رسائی کو ممکن بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ پورے صوبے میں معیشت کی بڑھوتری کیلئے انڈسٹریل زون کا ایک جال بچھایا جا ئے گا۔ یہ انڈسٹریل زون ایک طرف معیشت کو بڑھوتری دے گا تو دوسری طرف مقامی افراد کیلئے روزگار کی فراہمی ممکن بنائے گا ۔ مزید برآں وزیراعلی خیبرپختونخوا محمود خان کی ہدایت پر قبائلی اضلاع میں 19 تحصیل میونسپل قائم کی گئی ہیں ۔ محکمہ بلدیات خیبرپختونخوا نے اعلامیہ جاری کردیا ہے۔ وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے قبائلی اضلاع میں سماجی خدمات کے اداروں کو متحرک کرنے اور وہاں متعلقہ محکموں کے دفاتر قائم کرنے کیلئے غیر معمولی اقدامات کی ضرورت پر زور دیا تھا ۔ انہوں نے خصوصی طور پر میونسپل دفاتر کے قیام کی ہدایت کی تھی جس پر عمل درآمد کرتے ہوئے قبائلی اضلاع میں 19 تحصیل میونسپل قائم کر دی گئی ہیں جبکہ چھ سب ڈویژن میں بھی میونسپل دفاتر قائم کئے جارہے ہیں ۔وزیراعلیٰ نے اس سلسلے میں محکمہ بلدیات کی طرف سے جاری باضابطہ اعلامیے کو خوش آئند قرار دیا ہے ۔ انہوں نے ہدایت کی ہے کہ میونسپل دفاتر کے قیام کے پس پردہ مقاصد کا حصول بھی یقینی بنایا جائے اور قبائلی عوام کو ان کی توقعات کے مطابق خدمات فراہم کی جائیں۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ قبائل نے ایک طویل عرصے تک بڑی مشکلات کا سامنا کیا ہے تاہم اب محرومیوں کا دور ختم ہونے کو ہے ۔ ہم اپنے قبائل کی تیز رفتار ترقی اور خوشحالی کے سلسلے میں کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کریں گے ۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...