اقرار الحسن نے چوتھی جماعت میں صحاح ستہ سمیت کون کون سی کتابوں کا مطالعہ کرنے کا دعویٰ کردیا کہ ہنگامہ برپا ہوگیا؟ ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ بن گیا

اقرار الحسن نے چوتھی جماعت میں صحاح ستہ سمیت کون کون سی کتابوں کا مطالعہ کرنے ...
اقرار الحسن نے چوتھی جماعت میں صحاح ستہ سمیت کون کون سی کتابوں کا مطالعہ کرنے کا دعویٰ کردیا کہ ہنگامہ برپا ہوگیا؟ ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ بن گیا

  


کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن) اینکر پرسن اقرار الحسن کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ انہوں نے چوتھی جماعت میں صحاح ستہ سمیت متعدد تفاسیر کا مطالعہ کرلیا تھا ۔ ان کے اس دعویٰ کے بعد سوشل میڈیا پراتنی کڑی تنقید کی جارہی ہے کہ ’چوتھی جماعت‘ کے نام سے ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ بن گیا ہے۔

بات فواد چوہدری کے ٹویٹ سے شروع ہوئی جس میں انہوں نے حج سبسڈی کے حوالے سے بات کی تھی اور کہا تھا کہ حج اور زکوٰة صاحب استطاعت لوگوں پر واجب ہے۔ اقرار الحسن نے وزیر اطلاعات کی بات سے اتفاق کیا تو ان کی بلال خان نامی صارف سے بحث شروع ہوگئی جس میں محمد یوسف نامی شخص بھی کود پڑا۔

یوسف نے کہا ” وزیر مذہبی امور نے 42000 سبسڈی دینے کی سفارش کی تھی جو کابینہ اجلاس میں مسترد کر دی گئی، مطلب وزیر مذہبی امور سے زیادہ اسلام آپ جانتے ہیں“۔

محمد یوسف کی جانب سے یہ بات کہی گئی تو اقرار الحسن نے اس کے جواب میں کہا ” اُن سے زیادہ جاننے کا دعویٰ تو نہیں، لیکن میں چوتھی جماعت میں تھا جب میں تنویرالمقباس، تفسیرِکبیر، تفسیرِ درمنثور، مفاتیح الغیب(تفسیرِکبیر)، روح البیان، روح المعانی اور تفسیرابنِ کثیر سمیت ایک درجن تفاسیر اور صحاحِ ستہ کا مطالعہ کر چکا تھا“۔

اقرار الحسن کی جانب سے جب یہ بات کہی گئی تو کمیل احمد معاویہ سخت حیرت میں مبتلا ہوگئے اور سوال اٹھایا ” اقرار بھائی آپ نے جن تفاسیر کا تذکرہ فرمایا ہے یہ علماءکو درس نظامی میں 8 سال لگا کر بھی بمشکل گہرائی سے سمجھ آتی ہیں، آپ نے ماشاءاللہ چوتھی جماعت میں تمام تفاسیر کا مطالعہ بھی کر لیا اور سمجھ بھی گئے ، اقرار بھائی اتنا مذاق بھی تو نہ کریں کہ ہنس ہنس کے پیٹ میں درد ہونے لگے “۔

اقرار الحسن نے اس اعتراض پر وضاحت کرتے ہوئے کہا ” آپ ذرا زیادہ سمجھ گئے، میں نے سمجھنے کا دعویٰ کہاں کیا؟ صرف یہ بتانے کی کوشش کی کہ دین کے علم اور دینی کتب سے اتنا گہرا اور پرانا تعلق ہے“۔

اقرار الحسن کی وضاحت کے باوجود ان کی جانب سے چوتھی جماعت میں اتنی ضخیم کتابوں کے مطالعے کی بات پاکستانیوں سے ہضم نہیں ہوئی ۔ سوشل میڈیا پر نہ صرف اقرار الحسن کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے بلکہ اتنی زیادہ تنقید کی جارہی ہے کہ ” چوتھی جماعت “ کے نام سے ٹوئٹر پر اتوار کے پورے دن ٹاپ ٹرینڈ بنا رہا جو پاکستان اور جنوبی افریقہ کے میچ کی پہلی اننگ ختم ہونے کے باعث تھوڑا سا نیچے آگیا ہے۔

مزید : علاقائی /سندھ /کراچی


loading...