محکمہ ایکسائز‘ صوبہ بھر میں ڈیٹا انٹری آپریٹرز لاوارث‘ ترقی خواب‘ ملازمین میں تشویش

  محکمہ ایکسائز‘ صوبہ بھر میں ڈیٹا انٹری آپریٹرز لاوارث‘ ترقی خواب‘ ...

  



ملتان (نیوز رپورٹر) محکمہ ایکسائز ٹیکسیشن اینڈ نارکوٹکس کنٹرول پنجاب کی عدم توجہی کے باعث ملتان سمیت صوبہ بھر میں ڈیٹا انٹری اپریٹرز دیگر ملازمین کی طرح محکمانہ (بقیہ نمبر12صفحہ12پر)

پرموشن سٹریکچر سے محروم ہیں۔ صوبہ بھر کے 120 ڈیٹا انٹری اپریٹرز اپنی تعلیمی قابلیت و ٹیکنیکل مہارت کے حامل ہونے کے باوجود محکمہ میں بھرتی ہونیوالے کانسٹیبل سے پیچھے رہ گئے ہیں محکمہ کے اعلی افسران کی اس غفلت سے ڈیٹا انٹری اپریٹرز میں سخت تشویش پائی جاتی ہے ذرائع کے مطابق ڈیٹا انٹری اپریٹرز 12 سال قبل 11 ویں سکیل میں بھرتی ہوئے تھے اور 12 سال کے بعد انہیں 12 ویں سکیل میں ترقی دے کر ڈی ای او سے جونئیر کلرک پرموٹ کیا گیا ہے جبکہ اس کے مقابلے میں کانسٹیبلز جنہیں بھرتی کے وقت 5 واں سکیل دیا گیا تھا وہ تین بار پرموٹ ہوکر کانسٹیبلز سے کلرک 11 واں سکیل، سینئر کلرک 14 واں سکیل اور ہیڈ کلرک 16 ویں سکیل تک پرموٹ ہوچکے ہیں جبکہ ڈیٹا انٹری اپریٹرز محکمانہ سٹریکچر نہ ہونے کے باعث 12 سال کی مدت بعد بھی 11 ویں سکیل سے 12 سکیل میں پرموٹ کیا گیا جو سراسر ناانصافی کے مترادف ہے ذرائع نے بتایا کہ ڈیٹا انٹری اپریٹرز ایک وقت میں مختلف خدمات انجام دے رہے ہیں جن میں کیشئر، ڈاکومنٹ چیکنگ، کمپوٹر میں ریکارڈ فیڈنگ سمیت پبلک ڈیلنگ کے فرائض بھی انجام دے رہے ہیں محکمہ ایکسائز ٹیکسیشن پنجاب کے اعلی حکام ڈیٹا انٹری اپریٹرز کے ساتھ ہونیوالی ناانصافی کے خاتمہ کے لیئے موثر اقدامات کرتے ہوئے ان کا پرموشن سٹریکچر ترتیب دیں اور دیگر ملازمین کی طرز پر انہیں بھی محکمانہ پرموشن میں ان کی حق تلفی سے گریز کریں۔

مزید : ملتان صفحہ آخر