’خواتین صرف بدشکل مردوں کے ہاتھوں ہراساں ہونے پر شور مچاتی ہیں‘ بڑے ملک کے صدر کے بیان نے ہنگامہ برپا کردیا

’خواتین صرف بدشکل مردوں کے ہاتھوں ہراساں ہونے پر شور مچاتی ہیں‘ بڑے ملک کے ...
’خواتین صرف بدشکل مردوں کے ہاتھوں ہراساں ہونے پر شور مچاتی ہیں‘ بڑے ملک کے صدر کے بیان نے ہنگامہ برپا کردیا

  



کوئٹو(مانیٹرنگ ڈیسک) جنوبی امریکہ کے ملک ایکواڈور کے صدر نے گزشتہ روز خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے حوالے سے ایسا بیان دے دیاکہ ہنگامہ برپا ہو گیا۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق صدر لینن مورینو نے اپنے بیان میں کہا کہ ”خواتین صرف بدشکل مردوں کے ہاتھوں جنسی زیادتی کا نشانہ بننے پر شور مچاتی اور پولیس میں رپورٹ درج کرواتی ہیں۔“یہ بات انہوں نے گوایاکوائل شہر میں ایک کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے مزید کہا کہ ”مردوں کو مسلسل اور مستقل طور پر جنسی ہراسگی کا الزام عائد کیے جانے کا خطرہ رہتا ہے۔ یہ سچ ہے کہ خواتین اکثر جنسی ہراسگی رپورٹ کرتی ہیں جو کہ بہت اچھا ہے لیکن خواتین صرف ان مردوں کی جنسی ہراسگی اور زیادتی پر غصے میں آتی اور رپورٹ کرتی ہیں جو بدصورت ہوتے ہیں۔جب کوئی خوش شکل مرد کسی عورت کو جنسی ہراسگی یا زیادتی کا نشانہ بناتا ہے تو خواتین کے لیے وہ جنسی ہراسگی نہیں ہوتی۔“

صدر مورینو کے اس بیان کی ویڈیو سوشل میڈیا پر پوسٹ ہوئی تو ایکواڈور سمیت دنیا بھر سے شدید ردعمل سامنے آیا۔ اگلے روز صدر مورینو نے اپنے ٹوئٹر اکاﺅنٹ پر لوگوں سے معافی مانگتے ہوئے کہا کہ ”میرے اس بیان کا مقصد خواتین کے خلاف جنسی ہراسگی کے واقعات کو غیراہم ثابت کرنا نہیں تھا۔ اگر کسی کی میرے بیان سے دل آزاری ہوئی ہے تو میں آپ سے معافی مانگتا ہوں اور میں واضح کر دینا چاہتا ہوں کہ میں خواتین کے خلاف کسی بھی قسم کے تشدد کا مخالف ہوں۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس