حقوق تسلیم نہ کیے گئے تو کاشتکارراست اقدام پر مجبورہونگے

حقوق تسلیم نہ کیے گئے تو کاشتکارراست اقدام پر مجبورہونگے

ہور (پ ر)حکمرانوں نے کسان دشمن پالیسیاں تبدیل نہ کیں اور کاشتکاروں کے جائز حقوق تسلیم نہ کئے تو پاکستان بھر کے کاشتکار راست اقدام اٹھانے پر مجبور ہو جائیں گے حکومت کسانوں کو بہتر سہولیات فراہم کرنے کے وعدوں پر عملی طور پر کام کرے اور ان کے مسائل کا اصل حل نکالے تو کسان زرعی شعبے میں انقلاب برپا کر سکتے ہےں زرعی انقلاب سے ہی پاکستان حقےقی معنوں مےں ترقی کی راہ پر گامزن ہو گا ان خےالات کا اظہار کسان بورڈ لاہور کے صدر مےاں رشےد منہالہ، سےنئر نائب صدر چوہدری بشےر وڑائچ اور جنرل سےکرٹری سردار عرفان اللہ پڈھانہ نے کسانوں کی مےٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے کےا انہوں نے زرعی ان پٹس پر 17فیصد جی ایس ٹی کے نفاذ کو ظالمانہ قرار دیتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ زرعی شعبہ کو تباہی سے بچانے کے لےے ایسے زراعت دشمن فیصلے نہ کرے اور زرعی ان پٹس پر جی ایس ٹی فوری واپس لیا جائے گزشتہ سال سے اب تک زرعی مداخل کی قیمتوں میں ہونے والے ہوشربا اضافے کو مدنظر رکھتے ہوئے گندم کی نئی قیمت کا تعین کیا جائے، زرعی مداخل پر جی ایس ٹی ختم کیا جائے، زرعی ٹیوب ویلز پر اعلان کردہ ٹیرف کے مطابق بجلی کے بل ارسال کےے جائیں، کھاد کی بوری پر قےمت پرنٹ کی جائے تاکہ منافع خوروں کی حوصلہ شکنی ہو، زراعت کا شعبہ حکومت کی خصوصی توجہ کا مستحق ہے صنعت و زراعت لازم و ملزوم ہیں ان کی ترقی ہی سے حقیقی انقلاب آئے گا انہوں نے کہا کہ زرعی مشاورتی کونسل کا قیام خوش آئند ہے اس میں کاشتکاروں کی ملک گیر نمائندہ تنظیموں کو نمائندگی دی جائے۔

مزید : کامرس


loading...