پورے ملک میں دہشت گردی کے واقعات کا تسلسل افسوسناک ہے، طاہر القادری

پورے ملک میں دہشت گردی کے واقعات کا تسلسل افسوسناک ہے، طاہر القادری

لاہور (سٹاف رپورٹر)پاکستان عوامی تحریک کے قائدڈاکٹر محمد طاہر القادری نے کہا ہے کہ کوئٹہ سمیت پورے ملک میں دہشت گردی کے واقعات کا تسلسل افسوسناک بھی ہے اور شرمناک بھی۔فرقہ واریت کی صورت میں دہشت گردی کا عمل اوائل 1980ءسے شروع ہوا تھا۔آج اس گھناﺅنی اور خونی تاریخ کو 30سال سے زائد کا عرصہ گزر چکا ہے۔فرقہ واریت اور دہشت گردی میں جو ابتدامیں فاصلے تھے وہ اب نہیں رہے۔ مسائل کے حل کےلئے مثبت سیاسی سوچ اورویژن چاہےے۔جب نام نہاد جمہوریت کا دعویٰ کرنے والے حکمرانوں کے پاس اختیارات،قانون نافذ کرنے والے ادارے اور امن و امان قائم کرنے کی طاقت بھی ہو توکوئی چیز حکمرانوںسے مخفی نہیں ہوتی۔جنرل ضیاءالحق کے دور میں یہ دہشت گردڈالروں،سرمائے اور اسلحہ سے پالے جا رہے تھے ۔بعض مذہبی جماعتوں کو اس جہاد کے ٹھیکے دئےے گئے تھے ۔وہ مذہبی جماعتیں آج دہشت گردوں کو شہید کہتی ہیں جبکہ دہشت گردوں کے خلاف لڑنے والے فوجی جوانوں کو شہید کہنے کو ان کی زبان اجازت نہیں دیتی ۔ وہ گذشتہ روزمرکزی سیکرٹریٹ ماڈل ٹاﺅن میں منہاج القرآن علماءکونسل کے اجلاس سے ویڈیو لنک کے ذریعے گفتگو کر رہے تھے۔اس موقع پر علامہ سید فرحت حسین شاہ،علامہ امداد اللہ قادری،علامہ آصف اکبر میر،علامہ محمد حسین آزاد،علامہ ممتاز صدیقی اور علامہ عثمان سیالوی بھی موجود تھے۔ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ ہر افسوسناک سانحہ کے بعد حکومت وقت کے وزیر داخلہ یہی بیان دیتے ہیں کہ ان واقعات میں بیرونی ہاتھ ملوث ہیں۔دہشت گرد عناصر حکومت کی سر پرستی کے بغیر ریاست کے اندر ریاست نہیں بنا سکتے۔

طاہر القادری

مزید : صفحہ آخر


loading...