افتخار چوہدری کو سیکیورٹی دیں ورنہ سب سے واپس لے لیں گے:اسلام آباد ہائی کورٹ

افتخار چوہدری کو سیکیورٹی دیں ورنہ سب سے واپس لے لیں گے:اسلام آباد ہائی کورٹ
افتخار چوہدری کو سیکیورٹی دیں ورنہ سب سے واپس لے لیں گے:اسلام آباد ہائی کورٹ

  


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) اسلام آباد ہائی کورٹ نے وزارت داخلہ اور کابینہ ڈویڑن کو سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کو 9 جنوری تک بلٹ پروف گاڑی فراہم کرنے کا حکم دے دیا۔ جسٹس شوکت عزیز صدیقی کا کہنا تھا کہ سابق چیف جسٹس کو سیکورٹی دیں ورنہ تمام وزیروں سے بھی واپس لے لیں گے۔ جسٹس شوکت صدیقی نے آئی جی اسلام آباد سے استفسار کیا کہ بتائیں افتخار چودھری کی جان کو خطرہ ہے یا نہیں؟ رخواست گزار شیخ احسن الدین نے عدالت کو بتایا کہ سابق چیف جسٹس کی سیکورٹی پر صرف چار اہلکار تعینات ہیں۔ جوائنٹ سیکریٹری کابینہ ڈویڑن ضیاءالحق نے عدالت کو بتایا کہ ایسی کوئی گاڑی موجود نہیں، ایک گاڑی مرمت کے لیے بھیجی گئی ہے جو پندرہ روز میں آ جائے گی۔ جسٹس شوکت عزیز صدیقی کا اپنے ریمارکس میں کہنا تھا کہ دو سال گاڑی نہ ملی تو کیا انتظار کرتے رہیں گے؟ سابق چیف جسٹس کے لئے بلٹ پروف گاڑی ہر صورت میں چاہئے، چاہے کسی اور سے لے کر دیں۔ جوائنٹ سیکریٹری کابینہ ڈویڑن نے عدالت کو بتایا کہ بلٹ پروف گاڑی وزیراعظم کی اجازت سے ملتی ہے۔ جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے ریمارکس دیے کہ افتخار چودھری خود وزیراعظم سے بلٹ پروف گاڑی نہیں مانگ سکتے۔

مزید : اسلام آباد /اہم خبریں


loading...