خیبر پختونخوا اسمبلی میں آرمی پبلک سکول پشاور پر حملے کیخلاف قرارداد متفقہ طور پر منظور

خیبر پختونخوا اسمبلی میں آرمی پبلک سکول پشاور پر حملے کیخلاف قرارداد متفقہ ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


پشاور(خصوصی رپورٹ) خیبرپختونخوا اسمبلی نے سانحہ پشاور کے خلاف قرارداد متفقہ طور پر منظور کر لی۔ وفاقی حکومت سے قومی خارجہ پالیسی پر نظرثانی موثر نیشنل سیکیورٹی پالیسی کی تشکیل اور شہید پرنسپل کو سول ایوارڈ دینے کا مطالبہ کیا گیا۔خیبر پختوں خوا اسمبلی کا اجلاس 24 دن کے وقفے کے بعد سپیکر اسد قیصر کی صدارت میں شروع ہوا۔ اجلاس میں سانحہ پشاور کے شہداء کیلئے فاتحہ خوانی اور زخمیوں کی صحت یابی کیلئے دعا کی گئی۔ اس موقع پر اپوزیشن اور حکومتی اراکین کی جانب سے آرمی پبلک سکول پر حملے کے خلاف قرارداد متفقہ بھی منظور کی گئی۔ قرارداد میں شہداء4 کے لواحقین سے ہمدردی اور یکجہتی کا اظہار کیا گیا۔ قرارداد میں وفاقی حکومت سے قومی خارجہ پالیسی پر نظرثانی، موثر قومی سیکیورٹی پالیسی کی تشکیل، افغان مہاجرین اور آئی ڈی پیز کو باعزت گھر بھیجنے اور شہید پرنسپل طاہرہ قاضی کو سول ایوارڈ دینے کے مطالبات کئے گئے۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے اپوزیشن لیڈر مولانا لطف الرحمان کا کہنا تھا کہ سانحہ پشاور نے تمام قوم کو یکجا کر دیا ہے۔ سیاسی جماعتوں کو اپنے اختلافات ایک طرف رکھنے ہوں گے۔ قومی وطن پارٹی کے پارلیمانی لیڈر سکندر شیر پاؤ نے حکومت سے واقعے کی تحقیقات کیلئے اراکین اسمبلی پر مشتمل مشترکہ کمیٹی بنانے کا مطالبہ کیا۔ صوبائی وزیر بلدیات عنایت اللہ کا کہنا تھا کہ ہمارے بچے جنگ کا ایندھن بن رہے ہیں وقت آگیا ہے کہ خاجہ اور داخلہ پالیسیوں پر نظرثانی کی جائے۔ اجلاس پیر کے روز دوپہر دو بجے تک ملتوی کر دیا گیا

مزید :

صفحہ آخر -