، بھارت کے اپنی ضد پر اڑے رہنے سے مسئلہ کشمیر کی حقیقت تبدیل نہیں ہوسکتی ‘علی گیلانی

، بھارت کے اپنی ضد پر اڑے رہنے سے مسئلہ کشمیر کی حقیقت تبدیل نہیں ہوسکتی ‘علی ...

سری نگر(کے پی آئی) کل جماعتی حریت کانفرنس گ کے چیرمین سید علی گیلانی نے کہا کہ بھارت طاقت کے استعمال کے ساتھ ساتھ مراعات اور رعایات کی فراہمی سے کشمیریوں کی سوچ کو تبدیل نہیں کرسکا ہے۔ بھارت کشمیریوں کی خواہشات اور امنگوں کو دبانے میں بھی کامیاب نہیں ہوسکا ہے ۔ شہدا کے مقدس خون کی حفاظت کرنا ہم پر فرض ہے اور یہ تب ممکن ہوسکتا ہے جب ہم شہدا کے دشمنوں یعنی بھارت نواز لوگوں کا ساتھ نہ دیں اور ان کے کسی بھی دھوکے میں نہ پھنس جائیں، تب ہی ہم شہدا کے خون کی حفاظت کرسکتے ہیں۔ آلوچہ باغ سانبورہ پلوامہ میں شہید ہوئے نوجوان منظور احمد اور اس کے ایک اور ساتھی کو شاندار الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ سرفروش کشمیری قوم کی مظلومیت اور محکومیت مٹانے کے لیے اپنی عزیز جانوں کا نذرانہ پیش کررہے ہیں اور ہم پر ذمہ داری ڈالتے ہیں کہ ان کی قربانیوں کی لاج رکھتے ہوئے حصولِ مقصد تک جدوجہد کو ہر قیمت پر اور ہر صورت میں جاری وساری رکھا جائے۔ گیلانی صاحب نے کہا کہ جموں کشمیر کی غیر یقینی سیاسی صورتحال اور عدمِ استحکام کی وجہ سے قیمتی انسانی زندگیاں بھینٹ چڑھ رہی ہیں اور اس کی تمام تر ذمہ داری بھارتی حکمرانوں پر عائد ہوجاتی ہے، جو کشمیری عوام کی خواہشات اور امنگوں کا احترام کرنے کے بجائے اپنی ضد اور ہٹ دھرمی پر اڑے ہوئے ہیں اور اس خطے پر طاقت کے زور پر اپنا جبری قبضہ جاری رکھنا چاہتے ہیں۔

گیلانی کی ہدایت پر تحریک حریت صدرِ ضلع پلوامہ سید محی الدین اندرابی، بشیر احمد قریشی و دیگر رفقا پر مشتمل ایک وفد نے شہید موصوف کے نماز جنازہ میں شرکت کی، جبکہ نماز جنازہ تحریک حریت کے معاون سیکریٹری شعبہ تبلیغ بشیر احمد قریشی نے پڑھائی۔ وفد نے لواحقین تک گیلانی کی طرف سے تعزیتی پیغام پہنچایا۔ ایک بیان میں گیلانی نے کہا کہ بھارت کی اکڑ اور ہٹ دھرمی کی وجہ سے جموں کشمیر میں قیمتی انسانی زندگیوں کا اتلاف برابر جاری ہے اور جبری فوجی قبضے کے خلاف ہمارے نوجوان آئے دن سرفروشی کا راستہ اختیار کرتے ہیں۔ انہوں نے شہید کو شاندار الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ شہدا ہم پر یہ بھاری ذمہ داری ڈال کر جاتے ہیں کہ ہم اس مشن کی ہر صورت میں اور ہر قیمت پر حفاظت کریں، جس کے لیے وہ اپنی چڑھتی جوانیوں کو قربانی کرتے ہیں اور اپنے عیش وآرام کو تج دیتے ہیں۔ گیلانی نے کہا کہ ہماری قوم نے بھارت کے جبری قبضے کے خلاف 40سال تک ایک پرامن تحریک چلائی اور وہ جمہوری طریقے سے اپنے حقوق کی بازیابی کے لیے جدوجہد کرتے رہے، البتہ بھارت کی حکومت ٹس سے مس نہ ہوئی اور وہ فوجی طاقت کے ذریعے سے ان کی آواز کو خاموش کرانے کی کوشش کرتی رہی۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کے اپنی ضد پر اڑے رہنے سے مسئلہ کشمیر کی حقیقت تبدیل نہیں ہوسکتی ہے، البتہ یہ مسئلہ الجھے رہنے سے کشمیریوں کے ساتھ ساتھ برصغیر کے لئے بھی سیاسی غیریقینیت، عدمِ استحکام اور اتھل پتھل کا باعث بنا رہے گا اور اس خطے میں کروڑوں عوام زندگی کی بنیادی ضروریات سے محرومیت کے شکار رہیں گے۔ گیلانی نے کہا کہ بھارت نے اپنی طاقت کے استعمال کے ساتھ ساتھ مراعات اور رعایات کی فراہمی کو بھی آزماکر دیکھا ہے، البتہ وہ کشمیریوں کی سوچ کو تبدیل کرسکا ہے اور نہ وہ ان کی خواہشات اور امنگوں کو دبانے میں کامیاب ہوسکا ہے ۔ اس موقع پر انہوں نے عوام سے مخاطب ہوکر کہا کہ شہدا کے مقدس خون کی حفاظت کرنا ہم پر فرض ہے اور یہ جب ہی ممکن ہوسکتا ہے جب ہم شہدا کے دشمنوں یعنی ہندنواز لوگوں کا ساتھ نہ دیں اور ان کے کسی بھی دھوکے میں نہ پھنس جائیں، تب ہی ہم شہدا کے خون کی حفاظت کرسکتے ہیں۔

مزید : علاقائی