ظلم اور ناانصافی جہاں بھی ہو قابل مذمت ہے،پروفیسر ساجد میر

ظلم اور ناانصافی جہاں بھی ہو قابل مذمت ہے،پروفیسر ساجد میر

  

لاہور(خبر نگار خصوصی) امیر مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ شام میں ڈھائے جانے والے مظالم پر دنیا کی خاموشی پر مسلم ممالک میں ردعمل موجودہے۔ ردعمل میں اگر کوئی ہتھیار اٹھارہا ہے تو وہ غلط ہے ،تاہم ظلم اور ناانصافی جہاں بھی ہو قابل مذمت ہے۔ شدت پسندی اور دہشت گردی کے عوامل کا جائزہ لینا ہو گا۔مرکزی دفتر میں مرکزی عہدیداروں کے مشاورتی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ترکی میں ہونے والے واقعات کی ہم مذمت کرتے ہیں۔ ایک منصوبہ بندی کے تحت ترکی میں دہشت گردی کروائی جارہی ہے۔ کیونکہ ترکی نے ہمیشہ مظلوم مسلمانوں کا ساتھ دیا ہے جس کی اسے سزا دی جارہی ہے۔ شدت پسند گرہوں کی تخریبی کارروائیوں کو اسلام کے کے ساتھ جوڑکر اسلام کو بدنام کیا جارہا ہے حالانکہ اسلام امن کا دین ہے۔عالمی سطح پر مسلمانوں کے خلاف منفی جذبات کو ابھارا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم ممالک خود دہشت گردی کا شکار ہیں،علماء دہشت گردی کو اسلام کے ساتھ جو ڑنے کی سازش کو ناکام بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ تمام ممالک عالمی سطح پر داعش و دیگر شدت پسند تنظیموں کے خلاف بلا امتیاز کارروائی کریں ۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -